بھارتی ٹی وی چینلز کے ذریعے منی لانڈرنگ کی جارہی ہے، چئیرمین پیمرا

ویب ڈیسک  منگل 18 اکتوبر 2016

قوم مشکل سے مشکل کام کو حل کرنے کے لئے متحد اور متفق ہوجائے تو کچھ بھی ناممکن نہیں، ابصار عالم : فوٹو : فائل

قوم مشکل سے مشکل کام کو حل کرنے کے لئے متحد اور متفق ہوجائے تو کچھ بھی ناممکن نہیں، ابصار عالم : فوٹو : فائل

 اسلام آباد: چئیرمین پیمرا ابصارعالم کا کہنا ہے کہ بھارتی ٹی وی چینلز کے ذریعے پیسہ بیرون ملک بھیجا جارہا ہے منی لانڈرنگ کرنے والوں کا پیچھا کریں گے۔

اسلام آباد میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے چئیرمین پیمرا ابصارعالم کا کہنا تھا کہ غیر قانونی بھارتی چینلز کی بندش کا پہلا مرحلہ مکمل کرلیا ہے گزشتہ کچھ دہائیوں سے پاکستان میں غیر قانونی کام ہورہا تھا اور بھارتی چینلز کے ذریعے منی لانڈرنگ کی جارہی تھی، بھارت پیسہ بھیجنے والوں کا پیچھا کیا جائے گا۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: چیئرمین پیمرا کو خصوصی اختیارات تفویض

چئیرمین پیمرا کا کہنا تھا کہ مشکل اور طویل کام کو شروع کیا ہے جسے بہت جلد مکمل کرلیں گے کچھ لوگ ذاتی مفادات کے لئے چینلز بنانا چاہتے ہیں اورچند لوگ بھول گئے ہیں کہ ریاست کے ساتھ مقابلہ نہیں کرنا چاہئے پیمرا کی ٹیموں پر فائرنگ کی گئی اور دھمکیوں کے ذریعے ڈرانے کی بھی کوشش کی گئی جبکہ سمندری کے قریب گارڈ نے آپریشن ٹیم کے افراد پر فائرنگ کرکے انہیں زخمی بھی کیا لیکن میں بتانا چاہتا ہوں کہ وہ ریاست کو چیلنج نہ کریں کیوں کہ ریاست سے مقابلہ نہیں کیا جا سکتا۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: چند لوگ صحافت کو بدنام کررہے ہیں

ابصارعالم کا کہنا تھا کہ 40 ہزار سے زائد کیبل آپریٹرز کی مانیٹرنگ کررہے ہیں 120 میں سے 117 کیبل آپریٹرز نے پیمرا کی ہدایات پر عمل کیا پاکستان میں غیرملکی چینلز کے لئے لینڈنگ رائٹ پالیسی میں کمی کی جبکہ پاکستان کے اپنے ڈی ٹی ایچ کے لئے 17 درخواستیں بھی موصول ہوچکی ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ہمیں صوبائی حکومتوں اور کیبل آپریٹرز کی جانب سے مکمل تعاون حاصل ہے اگر قوم مشکل کام کو حل کرنے کے لئے متحد اور متفق ہوجائے تو کوئی بھی کام ناممکن نہیں۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔