ٹرمپ کاروبار سے دستبردار، اسٹیون مینیوچن وزیر خزانہ نامزد

اے ایف پی  جمعرات 1 دسمبر 2016
کاروبار سے مکمل الگ ہو جاؤں گا۔ صدارت کہیں زیادہ اہم کام ہے۔ فوٹو:فائل

کاروبار سے مکمل الگ ہو جاؤں گا۔ صدارت کہیں زیادہ اہم کام ہے۔ فوٹو:فائل

واشنگٹن:  امریکاکے نومنتخب صدرڈونلڈ ٹرمپ نے اعلان کیا ہے کہ وہ مفادات کے ٹکراؤ سے بچنے اور صدارت پرمکمل توجہ مرکوز کرنے کی غرض سے اپنا کاروبار مکمل طور پر چھوڑ رہے ہیں۔

بی بی سی کے مطابق ٹویٹس کے ایک سلسلے میں ٹرمپ نے کہا کہ وہ 15دسمبر کو نیویارک میں اپنے بچوں کے ہمراہ ایک بڑی پریس کانفرنس سے خطاب کریں گے جس کے دوران وہ بتائیں گے کہ ملک چلانے پر توجہ مرکوز کرنے اور اسے دوبارہ سے عظیم بنانے کی خاطر وہ اپنا کاروبار مکمل طور پر چھوڑ رہے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ اگرچہ قانون ایسی کوئی شرط عائد نہیں کرتا لیکن وہ سمجھتے ہیں کہ یہ ظاہری طور پر بہت ضروری ہے حالانکہ بطورصدر ان کے مختلف کاروبار کے دوران مفادات کا کسی قسم کا تصادم نہیں ہے۔

اس لیے ایسی قانونی دستاویزات تیار کی جا رہی ہیں جن کی رو سے میں کاروبار سے مکمل الگ ہو جاؤں گا۔ صدارت کہیں زیادہ اہم کام ہے۔ اس سے قبل وہ یہ تشویش مسترد کرتے رہے ہیں کہ ان کے کاروبار اور صدارت کے درمیان مفادات کا ممکنہ ٹکراؤ پیدا ہو سکتا ہے۔دریں اثنا ڈونلڈ ٹرمپ نے ممتاز بینکار اسٹیون مینیوچن کو وزیر خزانہ اور ارب پتی شخصیت وِلبر رَوز کو وزیر تجارت نامزد کیا ہے۔اے ایف پی کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے سابق حریف اور سیکریٹری خارجہ کے مضبوط امیدوار مٹ رومنی کے ساتھ نیویارک کے ایک ریستوران میں ڈنر کیا۔ دونوں رہنماؤں کی گزشتہ 10 روز میں یہ دوسری ملاقات ہے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔