پنجاب حکومت کا لاپتا بچوں کے لیے موبائل ایپ بنانے کا فیصلہ

ویب ڈیسک  ہفتہ 13 جنوری 2018
ایپلی کیشن کے ذریعے لاپتا بچے کی تصویر ملک بھر میں پھیلا کر تلاش میں مدد لی جاسکے گی . فوٹو : فائل

ایپلی کیشن کے ذریعے لاپتا بچے کی تصویر ملک بھر میں پھیلا کر تلاش میں مدد لی جاسکے گی . فوٹو : فائل

 لاہور: پنجاب حکومت نے لاپتا ہونے والے بچوں کے لیے ‘امبرا لرٹ’ کی طرز پر ایپلی کیشن بنانے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

قصور میں زیادتی کے بعد قتل کی گئی زینب کے واقعے نے جہاں پوری قوم کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہے وہیں بچیوں سے زیادتی کے واقعات نے حکومت اور فلاحی تنظیموں  کو بھی سوچنے پر مجبور کردیا ہے کہ نصاب  کے ذریعے بچوں کو آگاہی دی جائے، حکومت پنجاب نے اسی سوچ کو عملی جامہ پہنانے کے لیے کام شروع کردیا ہے۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق وزیر اعلی پنجاب میاں شہباز شریف کی ہدایت پر وزیر قانون رانا ثنا اللہ کی سربراہی میں بنائی گئی کمیٹی حکومتی اقدامات کا جائزہ لے رہی ہے جس میں حکومتی عہدے دار، پولیس افسران اور صحافی بھی شامل ہیں۔

کمیٹی نے سول سوسائٹی، علما کرام اور ماہرین سے ملاقات کی اور تجاویز لیں، بچوں کے تحفظ کے لیے قانون  سازی کا بھی جائزہ لیا گیا، کمیٹی نا صرف پولیس نفری بڑھانے پر توجہ دے گی بلکہ بچوں کے تحفظ سے متعلق مواد نصاب میں بھی شامل کرے گی اور روزانہ کی بنیاد پر کمیٹی کے اجلاس میں تجاویز تیار کی جائیں گی۔

علاوہ ازیں حکومت نے پنجاب کی یونیورسٹیوں کو بچوں کے ساتھ ایسے واقعات پر تحقیق کی ہدایت کردی ہے جب کہ لاپتا بچوں کی تلاش کے لیے ‘امبرا لرٹ’ کی طرز پر ایپلی کیشن بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے، اس ایپلی کیشن کے ذریعے کسی بھی لاپتا بچے کی تصویر اور کوائف ملک بھر میں پھیلا کر تلاش میں مدد لی جاسکے گی۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔