بہادرآباد گروپ کی فاروق ستار کے امیدواروں کو سینیٹ الیکشن سے باہر کرنے کی کوشش ناکام

ویب ڈیسک  پير 19 فروری 2018
الیکشن کمیشن نے پی آئی بی کے 9 امیدواروں کی دستبرداری کیلئے لکھا گیا ایم کیو ایم بہادرآباد کا خط مسترد کردیا فوٹو:فائل

الیکشن کمیشن نے پی آئی بی کے 9 امیدواروں کی دستبرداری کیلئے لکھا گیا ایم کیو ایم بہادرآباد کا خط مسترد کردیا فوٹو:فائل

 کراچی: ایم کیو ایم بہادرآباد گروپ کی جانب سے فاروق ستار کے امیدواروں کو سینیٹ الیکشن سے باہر کرنے کی کوشش ناکام ہوگئی۔

سینیٹ الیکشن کے لیے کاغذات نامزدگی واپس لینے کا وقت ختم ہوگیا ہے تاہم متحدہ قومی موومنٹ پاکستان (ایم کیو ایم) کے دونوں دھڑوں پی آئی بی اور بہادرآباد کے کسی امیدوار نے کاغذات نامزدگی واپس نہیں لیے اور تمام امیدوار میدان میں ہیں۔

ایم کیو ایم بہادرآباد گروپ کی جانب سے فاروق ستار گروپ کے امیدواروں کو سینیٹ الیکشن سے باہر کرنے کی کوشش بھی ناکام ہوگئی۔ ایم کیو ایم بہادرآباد گروپ کے سربراہ خالد مقبول صدیقی نے پی آئی بی گروپ کے 9 امیدواروں کے پارٹی ٹکٹ کی واپسی کے لیے الیکشن کمیشن کو خط لکھ دیا جو ذرائع کے مطابق الیکشن کمیشن نے مسترد کردیا ہے۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: ایم کیوایم رابطہ کمیٹی نے کامران ٹیسوری کو سینیٹ کا ٹکٹ جاری کردیا

خالد مقبول صدیقی کی جانب سے لکھے خط میں کہا گیا کہ پارٹی کی جانب سے کامران ٹیسوری، کشور زہرہ، فرحان چشتی، احمد چنائے، حسن فیروز، علی رضا عابدی، منگلا شرما، نگہت شکیل اور امین الحق کے کاغذات نامزدگی واپس لے لیے گئے ہیں۔ خط میں کہا گیا کہ فروغ نسیم، عامر چشتی، نسرین جلیل، عبدالقادر خانزادہ اور سنجے پروانی ایم کیو ایم کے حتمی امیدوار ہیں۔ واضح رہے کہ ایم کیو ایم بہادر آباد اور رابطہ کمیٹی نے کامران ٹیسوری کے ساتھ ساتھ مخالف گروپ پی آئی بی کے تمام سینیٹ امیدواروں کو بھی ٹکٹ جاری کئے تھے۔

صوبائی الیکشن کمیشن نے کاغذات نامزدگی واپس لینے والے امیدواروں کی حتمی فہرست جاری کردی ہے جس میں ایم کیو ایم کے دونوں دھڑوں کے امیدوار نام شامل ہیں۔ سندھ سے سینیٹ کی 12 نشستوں کے لئے 33 امیدوار میدان میں ہیں اور پولنگ تین مارچ کو سندھ اسمبلی میں ہوگی۔ ادھر صوبائی الیکشن کمیشن خالد مقبول صدیقی کے خط کے حوالے سے واضح موقف دینے سے گریز کر رہا ہے۔ ترجمان الیکشن کمیشن نے کہا ہے کہ خالد مقبول صدیقی کے خط کے حوالے سے کچھ علم نہیں۔

اس خبرکوبھی پڑھیں: کامران ٹیسوری کو سینیٹر بنانے پرمتحدہ 2 دھڑوں میں تقسیم

علاوہ ازیں ایم کیو ایم فاروق ستار گروپ نے انٹرا پارٹی انتخابات کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع کرا دی ہیں جس کے مطابق الیکشن میں فاروق ستار نے سب سے زیادہ 9 ہزار 423 ووٹ لیے اور متفقہ طور پر پارٹی کنوینر (سربراہ) منتخب ہوئے، جب کہ مرکزی ایگزیکٹیو کونسل 38 ممبران اور رابطہ کمیٹی 35 ممبران پر مشتمل ہے۔

دوسری جانب مرکز بہادرآباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ایم کیو ایم کے رہنما عامر خان نے کہا ہے کہ فاروق ستار بہادرآباد آئے تو انہیں چائے پلاکر روانہ کردیں گے۔ فاروق ستار کے ایم کیو ایم کے مرکز بہادرآباد کا دورہ کرنے سے متعلق ایک سوال کے جواب میں عامر خان نے کہا کہ فاروق ستار شوق سے بہادرآباد آئیں، چائے پلاکر روانہ کردیں گے۔ فیصل سبزواری نے کہا کہ یہ فاروق ستار کا اپنا گھر ہے، وہ مہمان نہیں اور جب چاہے یہاں آ سکتے ہیں۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔