جامعہ کراچی میں طالبات کو ہراساں کرنے سے متعلق تحریک التوا جمع

اسٹاف رپورٹر  منگل 20 مارچ 2018
یونیورسٹیز میں بھی طالبات محفوظ نہیں ہیں، نصرت سحرعباسی۔ فوٹو؛ فائل

یونیورسٹیز میں بھی طالبات محفوظ نہیں ہیں، نصرت سحرعباسی۔ فوٹو؛ فائل

 کراچی:  فنکشنل لیگ کی رکن اسمبلی نصرت سحر عباسی نے جامعہ کراچی میں طالبات کو ہراساں کرنے سے متعلق سندھ اسمبلی میں تحریک التوا جمع کرادی۔

تحریک التوا میں کہا گیا ہے کہ جامعہ میں اساتذہ طالبات کو ہراساں کررہے ہیں معاملے کی تحقیقات کرائی جائے، یہ حساس معاملہ ہے جس پر سندھ اسمبلی میں بحث کی جائے۔

میڈیا سے گفتگو میں نصرت سحرعباسی کا کہنا تھا کہ یونیورسٹیز میں بھی طالبات محفوظ نہیں ہیں، ایسی صورتحال میں طالبات کہاں جائیں تعلیم حاصل نہ کریں ؟ کیا لڑکیاں گھروں پر بیٹھ جائیں اس اہم معاملے پرایوان میں بحث ضروری ہے۔

امید ہے کہ وزیر پارلیمانی اموراس حساس نوعیت کی تحریک التوا کی مخالفت نہیں کرینگے،نصرت سحرعباسی نے سندھ بھر میں سائن بورڈ سندھی زبان میں لگائے جانے کی قرارداد بھی سندھ اسمبلی میں جمع کرائی اورکہا کہ سندھی زبان میں سائن بورڈ نہ ہونے کی وجہ سے شہریوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

فنکشنل لیگ کی نصرت سحر عباسی نے داؤ یونیورسٹی میں ایک پروفیسر کی جانب سے سندھی زبان میں بات کرنے سے منع کے خلاف بھی تحریک التوا سندھ اسمبلی میں جمع کرائی۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔