پاکستان کو امریکی اسلحے کی فروخت!

ایڈیٹوریل  اتوار 7 اپريل 2013
امریکا اگر پاکستان کو دفاعی سازوسامان دینے کے لیے تیارہے تو اسے مثبت پیش رفت قرار دیا جاسکتا ہے۔   فوٹو: اے ایف پی

امریکا اگر پاکستان کو دفاعی سازوسامان دینے کے لیے تیارہے تو اسے مثبت پیش رفت قرار دیا جاسکتا ہے۔ فوٹو: اے ایف پی

ایک خبر کے مطابق امریکا نے پاکستان کو اسلحے اور دیگر حربی ساز و سامان کی فروخت کی اجازت دینے کا عندیا ظاہر کیا ہے۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق امریکا نے پاکستان کو دفاعی ساز و سامان فروخت کرنے کا سگنل دیدیا ہے۔ یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ گزشتہ چھ ماہ کے دوران یہ دوسرا موقع ہے جب امریکا نے پاکستان کو اربوں ڈالر کا دفاعی ساز و سامان فروخت کرنے کا اجازت نامہ جاری کیا ہے۔

اخباری اطلاع کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ یہ منظوری ملٹری فنانسنگ پروگرام کے تحت دی گئی ہے۔ امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے مزید کہا ہے کہ پاکستان کو دفاعی ساز و سامان کی فروخت کا فیصلہ قومی سلامتی مفادات کے تناظر میں کیا گیا ہے۔ تاہم پاکستان کو اسلحہ کی فروخت کے لیے امریکی کمپنیوں کو کانگریس سے منظوری لینا ہو گی۔ ادھر پاکستان کے دورے پر آئے ہوئے امریکی مرکزی کمان (سینیٹ کام) کے نئے کمانڈر جنرل لائیڈ آسٹن نے جمعہ کو سیکریٹری دفاع لیفٹیننٹ جنرل (ر) آصف یاسین ملک سے راولپنڈی میں ملاقات کی، اس دوران کمانڈر امریکی سینیٹ کام کا کہنا تھا کہ پاکستان ہمیشہ ایک قابل اعتماد شراکت دار رہا ہے، پاک امریکا تعلقات بہتری کی جانب گامزن ہیں۔

پاکستان اور امریکا ایک دوسرے کے قومی مفاد کے لیے انتہائی اہم ہیں۔ جنرل لائیڈ آسٹن نے کہا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بڑی قربانیاں دیں، مشکل زمینی علاقے کے باوجود پاک فوج کی دشمن کے خلاف کامیابی قابل تعریف ہے۔ اس موقع پر پاکستان کے سیکریٹری دفاع لیفٹیننٹ جنرل (ر) آصف یاسین ملک نے کہا کہ پاکستان خطے میں امن کا خواہاں اور اپنا کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہے۔پاکستان اور امریکا  کے درمیان تعلقات نشیب وفراز کا شکار چلے آرہے ہیں تاہم دونوں ملکوں نے مشکل وقت میں ایک دوسرے کا ساتھ دیا ہے۔

امریکا اگر پاکستان کو دفاعی سازوسامان دینے کے لیے تیارہے تو اسے مثبت پیش رفت قرار دیا جاسکتا ہے۔ امریکا کو پاکستان کی دفاعی ضروریات کا بخوبی علم ہے۔اس خطے میں طاقت کا توازن برقرار رکھنے کے لیے پاکستان کو دفاعی لحاظ سے مضبوط ہونا چاہیے۔پاکستان اس وقت دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑ رہا ہے۔یہ ایسی جنگ ہے جس میں فتح کے لیے امریکا اور پاکستان کو مل کر کام کرنا چاہیے۔امید ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان دفاعی تعلقات مزید گہرے اور مضبوط ہوںگے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔