امریکا کو محدود ڈرون حملوں کی اجازت دی تھی، پرویز مشرف

ویب ڈیسک  جمعـء 12 اپريل 2013
ڈرون حملے ٹارگٹ کو تنہا ہونے اور سویلین نقصان نہ ہونے کی شرط پر اپنے اہداف کو نشانہ بنائیں گے، پرویز مشرف۔ فوٹو:فائل

ڈرون حملے ٹارگٹ کو تنہا ہونے اور سویلین نقصان نہ ہونے کی شرط پر اپنے اہداف کو نشانہ بنائیں گے، پرویز مشرف۔ فوٹو:فائل

سابق صدر پرویز مشرف نے پہلی مرتبہ ڈرون حملوں کے لئے امریکا کے ساتھ معاہدہ کرنے کا اعتراف کیا ہے، ان کا کہنا تھا کہ امریکا کو محدود ڈرون حملوں کی اجازت دی تھی۔

ایک امریکی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے سابق صدر پرویز مشرف کا کہنا تھا کہ امریکا کو یہ اجازت صرف خاص مواقعوں کے لئے دی گئی تھی، انہوں نے کہا کہ جاسوس طیارے کے ذریعے حملے محدود پیمانے پر کرنے کا معاہدہ ہوا تھا اور یہ طے پایا تھا کہ ڈرون حملے ٹارگٹ کو تنہا ہونے اور سویلین نقصان نہ ہونے کی شرط پر اپنے اہداف کو نشانہ بنائیں گے ۔

پرویز مشرف کا کہنا تھا کہ  شدت پسند پہاڑوں کے ان علاقوں میں رہتے تھے جہاں پہنچنا ممکن نہیں ہوتا تھا، ان حملوں کی اجازت صرف ایسی صورت میں دی تھی جب خود پاکستانی فوج کے پاس کارروائی کے لئے وقت نہ ہو۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔