کتابیں بیچنے والے بچے کو گاڑی نے کچل دیا

نمائندہ ایکسپریس  جمعـء 15 جون 2018
پولیس نے گاڑی ڈرائیور حبیب ظفر کو گرفتار کیا لیکن جلد ہی ضمانت پر رہا کر دیا۔ فوٹو: فائل

پولیس نے گاڑی ڈرائیور حبیب ظفر کو گرفتار کیا لیکن جلد ہی ضمانت پر رہا کر دیا۔ فوٹو: فائل

اسلام آباد: وفاقی دارلحکومت میں فیصل چوک پر کتابیں بیچنے والا لڑکا 15سالہ فلک شیر پولیس ٹیم کو دیکھ کر بھاگا تو تیز رفتار گاڑی کے نیچے آ کر جاں بحق ہوگیا۔

اسلام آباد پولیس میں بھکاریوں کے خلاف آپریشن کر رہی تھی، فلک شیر ڈرکر بھاگا اور لقمہ اجل بن گیا۔ پولیس نے گاڑی ڈرائیور حبیب ظفر کو گرفتار کیا لیکن جلد ہی ضمانت پر رہا کر دیا۔

متوفی فلک شیر کے ورثا نے ضیا مسجد نیو شکریال پر احتجاج کرتے ہوئے ایکسپریس وے کو بلاک کر دیا جس سے گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئیں اور ٹریفک بلاک ہوگئی۔ ورثا نے انصاف کیلئے چیف جسٹس سے نوٹس لینے کی درخواست کی ہے۔

فلک شیرکے والدکاکہناہے کہ اگرانصاف نہ ملاتوبچوں سمیت سپریم کورٹ کے سامنے خود کشی کرے گا۔ بتایاجا رہا ہے کہ فلک شیر مدرسے میں قرآن حفظ کر رہا تھا اور گزر بسر کیلیے کلر بکس بیچتا تھا۔ فلک شیر 10 بہن بھائیوں میں سے بڑا تھا۔

 



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔