بھارتی سفارتخانے کو کوٹ لکھپت جیل میں مبینہ شہری کی ہلاکت سے آگاہ کردیا گیا

آصف محمود  ہفتہ 13 اکتوبر 2018
کرشن ودیا ساگرکو 10 ماہ قید اور 5 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی تھی فوٹو: فائل

کرشن ودیا ساگرکو 10 ماہ قید اور 5 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی تھی فوٹو: فائل

 لاہور: بھارتی سفارتخانے کو کوٹ لکھپت جیل میں بیماری کے باعث مرنے والے بھارتی شہری کی موت سے متعلق آگاہ کردیا گیا ہے۔ تاہم کرشن ودیا ساگر کے بھارتی شہری ہونے کی ابھی تک تصدیق نہیں ہوسکی ہے۔

ذرائع کے مطابق کرشن ودیا ساگر کے خلاف 2015 میں دفعہ 420، 468، 471، 467 اور فارن ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا جس کے نتیجے میں کرشن ودیا ساگرکو 10 ماہ قید اور 5 ہزار روپے جرمانے کی سزا سنائی گئی تھی ، کرشن ساگرکی سزا 20 اپریل 2016 میں مکمل ہوگئی تھی، اس کی شہریت کی تصدیق کے لئے بھارتی حکومت کو متعدد بار آگاہ کیا گیا لیکن بھارت کی طرف سے اس کی تصدیق نہ ہوسکی۔

سرکاری دستاویزات کے مطابق کرشن ودیا ساگرکو 10 مارچ 2017 میں قونصلر رسائی دی گئی لیکن اس کے بعد بھی اس کی شہریت کی تصدیق کا مسئلہ حل نہیں ہوسکا تھا، کرشن ساگر کچھ عرصے سے بیمار تھا اورجیل میں ہی اس کا علاج معالجہ کیا جارہا تھا تاہم گزشتہ رات وہ چل بسا، اس کی لاش جناح اسپتال کے سرد خانے میں رکھی گئی ہے اور اب بھارت کی طرف سے اس کی لاش واپس لینے کے لئے درخواست کا انتظار کیا جارہا ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ بھارتی سفارتخانے ابھی تک اپنے مبینہ شہری کی لاش واپس لینے کے حوالے سے کوئی رابطہ نہیں کیا ہے ، اگر بھارتی سفارتخانے نے کرشن ساگر کو اپنا شہری تسلیم نہیں کیا اور نہ ہی لاش واپس لی تو اسے لاوارث قرار دے کر ہندو مذہب کے رسم ورواج کے مطابق اس کی آخری رسومات ادا کردی جائیں گی۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔