چیمپئنز ٹرافی؛ انضمام بیٹسمینوں کے ناقص کھیل پر نالاں

اسپورٹس رپورٹر  ہفتہ 29 جون 2013
نوجوانوں کو مواقع دیے بغیر مضبوط ٹیم تشکیل نہیں دی جا سکتی، سابق کپتان۔ فوٹو: فائل

نوجوانوں کو مواقع دیے بغیر مضبوط ٹیم تشکیل نہیں دی جا سکتی، سابق کپتان۔ فوٹو: فائل

لاہور: سابق کپتان انضمام الحق چیمپئنز ٹرافی میں پاکستانی بیٹسمینوں کے ناقص کھیل پر سخت نالاں ہیں۔

ان کے مطابق نوجوان کرکٹرز کو تسلسل کے ساتھ مواقع دیے بغیر مستقبل کیلیے مضبوط ٹیم تشکیل نہیں دی جاسکتی، میگا ایونٹ میں بیٹنگ لائن اعتماد سے عاری نظر آئی۔ تفصیلات کے مطابق انگلینڈ میں منعقدہ چیمپئنز ٹرافی میں گرین شرٹس کو تینوں میچز میں شکست کا سامنا کرنا پڑا، اس دوران بیٹسمینوں کی کارکردگی انتہائی غیرمعیاری رہی، سابق عظیم بیٹسمین انضمام  اس سے سخت ناخوش ہیں۔

انھوں نے ایک انٹرویو میں کہا کہ ایونٹ کے دوران بیٹنگ لائن نے سخت مایوس کیا، 1،2 کھلاڑی آؤٹ آف فارم ہوں تو دیگر ان کی خامیوں پر پردہ ڈال دیتے ہیں، مگر یہاں تو کپتان کے سوا کوئی بھی اپنی ذمہ داری پوری کرتا نظر نہیں آیا، ایسا محسوس ہورہا تھا کہ کسی کا اپنی صلاحیتوں پر اعتماد ہی باقی نہیں رہا، بیشتر بیٹسمین گرین شرٹ سے انصاف کرنے میں ناکام رہے۔

اسد شفیق کو ایک میچ کے بعد باہر بٹھا کر دوبارہ واپس لایا گیا، عمر امین بھی ٹیم کیساتھ ہونے کے باوجود موقع ملنے کے منتظر رہتے ہیں، ایسا رویہ حوصلہ شکنی کا باعث بنتا ہے، باصلاحیت پلیئرز کو اعتماد دینا ہوگا کہ ان کی پوزیشن کو کوئی خطرہ نہیں، ورنہ پرفارمنس متاثر ہوگی، عمران خان نے ہمیں ایسا ہی اعتماد دیا تھا، انھوں نے کہا کہ ورلڈ کپ کی تیاری کیلیے ٹیم میں نیا ٹیلنٹ شامل کرنے میں کوئی برائی نہیں لیکن نوجوانوں کو تسلسل کے ساتھ مواقع دینا ہونگے، کامران اکمل کو بیٹنگ کی بنا پر منتخب کیا گیا، وہ ٹاپ آرڈر میں رنز بھی اسکور کرتے رہے ہیں لیکن حالیہ ایونٹ ساتویں نمبر پر بھیج کر ضائع کیا گیا۔

ایک سوال پر سابق کپتان نے کہا کہ مصباح الحق کو تیسرے نمبر پر بیٹنگ کیلیے بھیجنے سے ٹیم کے مسائل میں اضافہ ہوگا، اگر وہ بھی جلد آؤٹ ہو گئے تو اننگز کو سنبھالنے والا کوئی نہیں ہوگا۔ انھوں نے کہا کہ ورلڈ کپ میں زیادہ وقت باقی نہیں، ہمیں چیمپئنز ٹرافی میں شکست کا ملبہ ایک دوسرے پر ڈالنے سے گریز کرتے ہوئے مسائل کا حل تلاش کرنے پر توجہ دینا ہوگی، سلیکٹرز نے اب باصلاحیت نوجوان پلیئرزکا انتخاب نہ کیا تو ہم ایک بار پھر پرانے چہروں کی بار بار ناکامی پر افسوس کے سوا کچھ نہیں کرسکیں گے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔