یمن میں فریقین کو جنگ بندی کے لیے اقوام متحدہ کی تنبیہ

ویب ڈیسک  جمعـء 7 دسمبر 2018
یمن میں 3 سال سے جاری خانہ جنگی کے خاتمے کیلیے اقوام متحدہ کے زیرانتظام سویڈن میں امن مذاکرات جاری ہیں۔ فوٹو : فائل

یمن میں 3 سال سے جاری خانہ جنگی کے خاتمے کیلیے اقوام متحدہ کے زیرانتظام سویڈن میں امن مذاکرات جاری ہیں۔ فوٹو : فائل

اسٹاک ہوم: اقوام متحدہ نے تنبیہ کیا ہے کہ یمن میں جنگ بندی کے لیے حکومتی فورسز اور حوثی باغی ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کریں۔ 

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب مارٹن گرفتھس نے سویڈن میں جاری امن مذاکرات کے ابتدائیہ میں فریقین کو جنگ بندی کے لیے ہنگامی بنیادوں پراقدامات کرنے پر زور دیا ہے۔

اقوام متحدہ کے وفد نے وارننگ دی ہے کہ یمن کا مستقبل حکومتی فورسز اور حوثی باغیوں کے ہاتھوں میں ہے، اگر مکمل تباہی سے بچنا ہے تو فریقین کو اب 3 سال سے جاری خانہ جنگی کو ختم کرنا ہوگا۔

اقوام متحدہ کے وفد کا مزید کہنا تھا کہ فریقین آگ سے کھیل رہے ہیں جس کے نتائج نہایت ہولناک ہیں اور اس کے اثرات پورے خطے میں مرتب ہورہے ہیں۔ اس آگ کو روکنا ہوگا ورنہ کئی اور علاقے اس کی زد میں آجائیں گے۔

سویڈن میں اقوام متحدہ کے زیر انتظام یمن امن مذاکرات جاری ہے، یہ دوسرا موقع ہے جب حکومتی حکام اور حوثی باغی ایک پلیٹ فارم پر جنگ بندی کے لیے مذاکرات کی میز پر بیٹھے ہیں اور قیدیوں کے تبادلے پر اتفاق رائے کر لیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ تین سال سے جاری خانہ جنگی کے نتیجے میں 56 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوگئے ہیں اور 2 کروڑ سے زائد افراد متاثر ہوئے ہیں۔ خانہ جنگی کے باعث لاکھوں بچے خوراک کی کمی کی وجہ سے ہلاک ہوئے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔