ممکنہ بارشیں، کے ای ایس سی کی جانب روایتی لاپرواہی کا مظاہرہ

اسٹاف رپورٹر  پير 8 جولائ 2013
شکایتی مراکز کے عملے کو صورتحال سے نمٹنے کیلیے ہدایات جاری نہیں کی گئیں۔ فوٹو: فائل

شکایتی مراکز کے عملے کو صورتحال سے نمٹنے کیلیے ہدایات جاری نہیں کی گئیں۔ فوٹو: فائل

کراچی: کراچی میں مون سون کی ممکنہ بارشوں کے پیش نظر شہر میں بجلی کی ترسیل وتقسیم کا نظام بری طرح متاثر ہونے کا خدشہ ہے کے ا ی ایس سی انتظامیہ نے بارش سے قبل اور بعد کی صورتحال سے نمٹنے کیلیے کوئی انتظامات نہیں کیے ہیں۔

واٹر بورڈ ودیگر اداروں کے ساتھ مل کر تاحال کوئی مشترکہ لائحہ عمل مرتب نہیں کرسکی، تفصیلات کے مطابق محکمہ موسمیات کی جانب سے کراچی میں مون سون بارشوں کی  پیش گوئی  کے باوجود کے ای ایس سی انتظامیہ  نے تاحال کوئی اقدامات نہیں کیے اور شہر بھر میں کے ای ایس سی کے تمام شکایتی مراکز کے عملے کو بارش کے دوران اور بعد میں پیدا ہونے والی صورت حال سے نمٹنے کے لیے کوئی ہدایات جاری نہیں کی گئیں، اس وقت تمام سینٹروں میں معمول کے مطابق عملہ اور سامان موجود ہے اور شہر میں کوئی بھی کوئیک رسپانس  سینٹر نہیں بنایا گیا جبکہ ماضی میں بارشوں سے قبل شہر میں 4 کوئیک رسپانس سینٹر بنائے جاتے رہے ہیں۔

ذرائع کے مطابق  کے ای ایس سی انتظامیہ کی جانب سے   شہر بھر میں بجلی کی ترسیل کے نظام  میں بہتری لانے کے لیے سالانہ سروس امپروومنٹ بھی نہیں کی گئی جس کے باعث رواں سال گرمیوں میں شہر بھر میں بڑی تعداد میں  کیبل فالٹس آرہے ہیں جس کے نتیجے میں ہزاروں صارفین کئی دنوں تک بجلی کی آنکھ مچولی کا شکار رہتے ہیں، شہریوں کا کوئی پر سان حال نہیں اور مون سون کی بارش کے نتیجے صورتحال کی سنگینی میں کئی گنا اضافہ ہونے کا خدشہ ہے، ذرائع کے مطابق شہر  کے کئی علاقوں میں موسم سر ما کے دوران زیر زمین پرانے کیبل تبدیل نہ ہونے کے باعث مون سون کی متوقع بارشوں کے دوران کئی علاقوں میں بجلی کی ترسیل کا نظام مکمل طور پر بیٹھنے کا خد شہ ہے  اور  اس کی بحالی میں  کئی دن لگ سکتے ہیں۔

کے ای ایس سی ذرائع کے مطابق کئی ماہ سے شہر کے درجنوں علاقوں میں زیر زمین کیبل کی تبدیلی ،اوولوڈ پاور ٹرانسفارمرز ،زنگ الود ہ پول اور لائنوں کی تبدیلی کے کسیز انتظامیہ کی سست روی کے باعث التوا کا شکار ہے جس کے باعث بارشوں کے دوران بڑے پیمانے پر خرابیاں پیدا ہونے کا خدشہ ہیں جبکہ دوسری جانب کے ای ایس سی کی جانب سے ایکسٹرا ہائی ٹینشن لائنوں کی امپرومنٹ نہیں کی گئی جس کے باعث واپڈا سے ملنے والی 7سو میگاواٹ بجلی اور کے ای ایس سی کی اپنی پیداواری پلانٹس سے ملنے والی بجلی میں طویل دورانیہ کے لیے تعطل کا بھی خدشہ ہیں،ذرائع کے مطابق کے ای ایس سی انتظامیہ کی جانب سے سالانہ سروس امپروومنٹ نہ کرنے کے بعد اب مون سون کی متوقع بارشوں کے پیش نظر بجلی کی بلا تعطل سپلائی جاری رکھنے کے لیے کوئی اقدامات نہیں کیے گئے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔