روس میں ’’جاسوس ماڈل‘‘ کے ریمانڈ میں مزید 3 دن کی توسیع

ویب ڈیسک  اتوار 20 جنوری 2019
ماڈل کو متنازع ’ جنسی پروگرام‘ کی تشہیر پر بنکاک سے ڈی پورٹ کیا گیا تھا۔ فوٹو : اے ایف پی

ماڈل کو متنازع ’ جنسی پروگرام‘ کی تشہیر پر بنکاک سے ڈی پورٹ کیا گیا تھا۔ فوٹو : اے ایف پی

 ماسکو: روس کی عدالت نے بیلاروس سے تعلق رکھنے والی خوبرو ماڈل کو جاسوسی کے الزام میں مزید تین دن تک حراست میں رکھنے کی توسیع کردی۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق متنازع جنسی تعلیمی پروگرام میں شرکت کرنے پر بنکاک سے خوبصورت ماڈل نستیا ربکا کو ڈی پورٹ کرکے ماسکو بھیج دیا تھا جہاں اسے 18 جنوری کو حراست میں لے لیا گیا۔

بیلا روس سے تعلق رکھنے والی ماڈل کو عدالت میں پیش کرکے مزید تین دن کے ریمانڈ کی استدعا کی گئی جسے عدالت نے قبول کرتے ہوئے ماڈل کو مزید تین دن کے لیے پولیس کے حوالے کردیا۔ پولیس ماڈل کو تشدد کرتے ہوئے اپنے ہمراہ لے گئی۔

ماڈل نستیا ربکا نے پولیس کی جانب سے عائد کیے گئے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے عدالت کو بتایا کہ امریکی صدارتی الیکشن میں روس کی مداخلت کا انکشاف کرنے پر مجھے جھوٹے کیس میں پھنسایا جا رہا ہے۔

بیلاروس سے تعلق رکھنے والی ماڈل کو بنکاک میں ایک ایسے مقام سے گرفتار کیا گیا تھا جسے جنسی سیل کے طور پر جانا جاتا تھا۔ بعد ازاں ماڈل کو کچھ عرصے قید کے بعد ماسکو ڈی پورٹ کیا گیا تھا۔

واضح رہے کہ ماڈل نے گزشتہ برس ایک انٹرویو میں انکشاف کیا تھا کہ امریکی صدارتی الیکشن میں روس کی مداخلت کے ثبوت اُن کے پاس موجود ہیں جو انہیں ٹرمپ کی انتخابی مہم چلانے والے ایک اہم ذمہ دار نے فراہم کیے تھے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔