خوبرو جاپانی ماڈل جو حقیقت میں وجود نہیں رکھتی

ویب ڈیسک  بدھ 23 جنوری 2019
آئما کوئی حقیقی ماڈل نہیں بلکہ کمپیوٹر پر تیارکی گئی ماڈل ہے۔ فوٹو: آئما انسٹاگرام

آئما کوئی حقیقی ماڈل نہیں بلکہ کمپیوٹر پر تیارکی گئی ماڈل ہے۔ فوٹو: آئما انسٹاگرام

جاپان: اس تصویر کو غور سے دیکھئے جس میں ایک حسین جاپانی ماڈل دکھائی دے رہی ہیں۔ اس کے بال حقیقی، جلد ہموار اور آنکھوں میں نمی تک اسے زندہ وجود کا درجہ دے رہے ہیں لیکن یہ صرف کمپیوٹر میں بنائی گئی ہے اور اس ماڈل کا اصل دنیا میں کوئی وجود نہیں۔

جاپانی لفظ ima کا مطلب ’ابھی‘ کے لیے استعمال ہوتا ہے جبکہ اسی بنا پر اس کمپیوٹر ماڈل کو imma  کا نام دیا گیا ہے۔ اب یہ انسٹا گرام کی مجازی ہستی بن چکی ہیں اور لوگ اس کے مداح ہوتے جارہے ہیں۔ اس وقت سوشل میڈیا پر اس کے 15 ہزار سے زائد فالوورز ہیں جبکہ اس کی سوانح میں لکھا ہے کہ یہ محص کمپیوٹر سے بنائی گئی ماڈل ہیں اور حقیقی دنیا میں یہ کہیں بھی موجود نہیں ۔

اسے ماڈلنگ کیفے انکارپوریٹ نے بنایا ہے اور گزشتہ برس اس کی کئی تصاویر پیش کی گئی تھیں تاہم یہ سال اس کی غیرمعمولی مقبولیت کا سال بھی ہے۔ اگلے ماہ سی جی ورلڈ میگزین اسے اپنے سرورق پر جگہ دے رہا ہے ۔ اس کے علاوہ بھی ہر شخص آئما کا گرویدہ ہے اور کمپیوٹر گرافکس کے ماہرین اس تخلیق پر حیران اور ششد ہیں۔ اگلے ماہ سی جی ورلڈ میگزین اسے اپنے سرورق پر جگہ دے رہا ہے ۔ اس کے علاوہ بھی ہر شخص آئما کا گرویدہ ہے اور کمپیوٹر گرافکس کے ماہرین اس تخلیق پر حیران اور ششدرر رہ گئے ہیں۔

آئما کی سب سے خاص بات اس کا حقیقی روپ ہے اور ہر دیکھنے والا اسے حقیقی سمجھتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آئما بہت تیزی سے مقبول ہورہی ہیں۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔