خیالات کی قید

آفتاب احمد خانزادہ  اتوار 10 مارچ 2019
aftabkhanzada2@yahoo.com

[email protected]

سولہویں اور سترہویں صدی میں یورپ کے ہر ملک میں فلسفیوں اور سائنس دانوں پر الحاد اور بغاوت کے الزام لگا کر انھیں زندہ جلاد یا جاتا تھا اور کبھی انھیں جیل کے تنگ و تاریک کمروں میں سسک سسک کر مرنے کے لیے چھوڑ دیا جاتا لیکن علم و حکمت کی ان قندیلوں کو جہالت کے دامن سے بجھانے کی کو شش ناکام رہی ۔ رونو کو روم میں زندہ جلادیاگیا لیکن اس کے خیال کو جلانے کے لیے ساری دنیا کا ایندھن ناکافی تھا ۔

اگر علم و دانش کے یہ علم بردار کلیسا کی تلواروں سے ڈر جاتے تو آج انسان کس حالت میں ہوتا ، یورپ کا احتسا ب عالموں کو زندہ جلانے میں کامیاب ہوگیا لیکن احتساب انسانی غور و فکر کو زنجیروں میں نہ جکڑ سکا یورپ کے اس عہد کی اگر تعزیری تاریخ پر غور کیاجائے تو وہ بھیانک اور لرزہ خیز سزاؤں کا ایک مسلسل عہد دکھائی دے گا اس عہد میں انسانی ذہن کو قید کر نے کی کوشش میں انسانی جسم کو زندہ جلایاگیا جسم جل گیا لیکن ذہن زندہ رہا جرم وسزا کے اس دور کے بعد خیالات باقی رہے کیونکہ خیال نہیں مٹا یاجاسکتا ۔

خیالات کو قید نہیں کیاجاسکتا خیال آزاد ہے فوج کے حملوں کی روک تھام کی جاسکتی ہے لیکن خیالات کے حملوں کو نوک سنگین سے نہیں رو کا جاسکتا۔ وحشت اور بربریت سے تہذیب و تمد ن تک کا یہ سارا سفر راتوں رات طے نہیں ہواانسان کو یہ سفر طے کر نے میں صدیا ں لگیں قربانیوں اور جدوجہد کی بہت طویل داستان ہے اس سارے سفر نے ایک بات ثابت کر دی کہ انسان عظیم ہے اور عوام سپر یم ہیں دنیاکی تاریخ میں کر شمے عوام نے ہی کرکے دکھائے ہیں یہ عوام ہی ہیں جنہوں نے آمروں ، بادشاہوں کے تاج و تخت اچھا ل کر پھینک دیئے جنہوں نے اپنے خالی ہاتھوں سے بڑے بڑے ٹینک الٹ کر رکھ دیئے بڑے بڑے ظالم ، جابر بادشاہ اور آمران ہی عوام کے ڈر و خوف کی وجہ سے ملک چھوڑ کر فرار ہوگئے۔

دنیا بھر کے عوام نے خو شحالی اور ترقی کی منزلیں ، جمہوریت اور ووٹ کی طاقت کے ذریعے طے کی ہیں پاکستان کا قیام ایک عوامی جدو جہد کا نتیجہ ہے نہ کہ عسکر ی جدو جہدکااوریہ جمہوریت ہی ہے جس کا وعد ہ ان کے آباؤ اجداد سے کیا گیا تھا ان سے کہا گیا تھا کہ وہ ایک جمہوری ملک میں رہیں گے جمہوری ملک وہ ہوتا ہے جہاں عوام سپریم ہوتے ہیں جہاں ہر شہر ی بلاکسی جبر اپنے ووٹ کا آزادانہ استعمال کرسکے جہاں آزادانہ اور منصفا نہ انتخابات ہوتے ہیں جس کے نتیجے میں پارلیمنٹ کا قیام عمل میں آتا ہے جو با اختیار ہوتی ہے پارلیمنٹ کو لامحدود اختیارات حاصل ہوتے ہیں وہ عدلیہ کے اختیارات میں کمی سمیت ہر طرح کی قانون سازی کی مجاز ہے۔

پارلیمنٹ کی منظورکر دہ ترمیم کسی عدالت میں چیلنج نہیں کی جاسکتی پارلیمنٹ آئین میں جو چاہے ترمیم کرسکتی ہے قائداعظم نے نئی دہلی میں رائٹر کے نمائندے ڈون کیمپل کو انٹرویو دیتے ہوئے 1946 میں کہا تھا’’ نئی ریاست ایک جدید جمہوری ریاست ہوگی جہاں حاکمیت اعلیٰ عوام کے پاس ہو گی ‘‘ 11 اگست 1947 کو پاکستان بننے سے 3 دن قبل پاکستان کی آئین سازاسمبلی کے صدر کی حیثیت سے کیے گئے اپنے تاریخی خطاب میں انھوں نے انسانوں پر مشتمل آئین ساز اسمبلی کو بار بار پاکستان کا مقتدر اعلیٰ کہہ کر مخا طب کیا روسو کہتا ہے ’’میں کیسا آدمی ہوں ، اس کا فیصلہ کو ئی شخص یا چند اشخاص نہیں کرسکتے بلکہ یہ فیصلہ کرنے کا حق فقط عوام ہی کو حاصل ہے اور میں اس کا فیصلہ کرنے کا حق عوام ہی پر چھوڑتا ہوں ‘‘ تو جناب ملک کے اہم فیصلے کسی شخص یا چند اشخاص پر کیسے چھوڑ ے جاسکتے ہیں شخص یا چند اشخاص غلط ہو سکتے ہیں لیکن عوام کبھی غلط فیصلے نہیں کر تے۔

ملک عوام کے لیے ہوتے ہیں نہ کہ عوام ملک کے لیے عوام سے زیادہ سمجھ دار اور عقل مند کوئی بھی نہیں ہوسکتا ۔ ریاست ایک منفر د کلیت ہوتی ہے آپ اس میں جانبدار ی تلاش نہیں کرسکتے ، کیونکہ اس میں آئین سب سے افضل ہوتاہے اور یہ نہ صرف ذہنی قوتوں کی نمائند گی کرتا ہے بلکہ اس میں تمام اخلاقی اور علمی ہمہ گیریت کی صورت پذیری بھی ہوتی ہے آئین میں سب سے اہم بات تو عوام کی سیاسی صورت حال کی نمود ہے ہیگل کہتا ہے ’’ہرآئین اپنے دور کا غماز ہوتاہے اور وہ سیاسی اصولوں کی کلیت ہوتا ہے ہم پرانی تاریخ کے کسی عظیم آئین سے جدید آئین کے بارے میں کچھ نہیں سیکھ سکتے ۔

وہ کہتا ہے ’’ اب ریاست اور عوام کا تعلق کیا ہے ریاست ، اس کے قوانین ، اس کی انتظامیہ شہریوں کے حقوق اس کی طبعی خصو صیات اس کے پہا ڑ ، آ ب و ہوا ، ملک ، شہریوں کی جائیداد ، تاریخ ، ریاست ، اسلاف کے کار نا مے ، ان کی یاد، ان سب کا تعلق عوام سے ہے اور ان کی زندگی میں رواں دواں ہے یہ سب ان کا ہے جیسے وہ خود اس کے ہیں کیونکہ ان کی ہستی (Being) ہے یہ سب مل کر روح عصر بنتی ہے اور ہر شہر ی اس کا نما ئند ہ ہے اوراس سے اس نے جنم لیا ہے اور وہ اسی میں بستا ہے ‘‘ ۔

آخری اورقطعی آزادی جسے انسان سے چھینا نہیں جاسکتا ’’ نہ ‘‘ کہنے کی آزادی ہے اور یہ ہی سارتر کے نظریہ قدرت و اختیار کا سنگ بنیاد ہے سارتر کہتا ہے کہ انسان کی آزادی یہ ہے کہ وہ ’’نہ ‘‘ کہے ۔ ہر انسان اپنی اخلاقی قدریں خود تخلیق کرتا ہے اس لیے وہ اپنے اعمال میں مطلق العنا ن ہے اور جس راہ عمل کو چاہے بلا رو ک ٹوک انتخاب کر سکتا ہے جے جی فریزر کردار پر بحث کرتے ہوئے لکھتاہے ’’ کسی قوم یا فرد میں استحکام کی سب سے بڑی علامت یہ ہے کہ وہ حال کو مستقبل پر قربان کر دے یہ خصوصیت جس فرد میں جتنی زیادہ ہوگی اتنا ہی اس کا کر دار مستحکم ہوگا جب ایک انسان اپنی زندگی کی آسائشیں بلکہ خود زندگی کو قربان کر دیتا ہے تاکہ مستقبل بعید میں آنے والی نسلوں کو آزادی اور صداقت کی بر کات میسر آسکیں ۔ یہ ہی انسان کی عظمت ہے ۔

سقراط، برونو، وکلف، شیخ الاشراق سہروردی نے اپنی جانیں کسی ذاتی فائدے کے حصو ل کے لیے قربان نہیں کی تھیں بلکہ اپنے عقائد و اصول کی پاسبانی کرتے ہوئے مو ت کو خندہ پیشانی سے دعوت دی تھی سقراط کے دوستوں نے کہا ’’ہم محا فظوں کو رشوت دے کر آپ کو بھگانے کی کو شش کررہے ہیں ‘‘ سقراط نے بھا گنے سے انکار کر دیا اور کہا ’’میں ایتھنز والوں کو بتانا چاہتا ہوں کہ انسان اپنے اصولوں کو اپنی جان سے زیاد ہ عزیز رکھ سکتاہے ۔

سقراط ، برونو، وکلف نے ’’ نہ ‘‘ کہا اور اپنی جان دے دی ۔اور صرف ’’نہ‘‘ کہنے کی وجہ سے یہ سب صدیوں بعد آج بھی زند ہ ہیں ۔ لیکن ان کے قاتلوں کے نام سے آج کوئی بھی واقف نہیں ہے ۔ عوام طاقت کا اصل سر چشمہ ہوتے ہیں طاقت اور فیصلے کر نے کا محو ر شخصیات نہیں بلکہ عوام ہوتے ہیں پاکستان کے عوام اپنا معاشرہ بدلنے کی مسلسل کو ششیں کررہے ہیں کیونکہ وہ عقل اور شعور کے مالک ہیں مثالی معا شر ہ قائم کرنے میں شاید کئی سال اور لگ جائیں لیکن عوام کو اپنی کامیابی پریقین ہے کیونکہ ان پر حقیقت آشکار ہو گئی ہے کہ صرف مثالی معا شرہ قائم کرنے سے ہی مثالی انسان کا ظہور ممکن ہے ۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔