عرفان کھوسٹ ویک اینڈ تھیٹر فیسٹیول کرائیں گے

کلچرل رپورٹر  جمعـء 13 ستمبر 2013
عرفان کھوسٹ نے پریس بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ اس فیسٹیول کے لیے انگریزی ، اردو اور پنجابی زبان کے آٹھ ڈراموں کا انتخاب کیا گیا ہے۔ فوٹو: فائل

عرفان کھوسٹ نے پریس بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ اس فیسٹیول کے لیے انگریزی ، اردو اور پنجابی زبان کے آٹھ ڈراموں کا انتخاب کیا گیا ہے۔ فوٹو: فائل

لاہور: فلم ، ٹی وی ،اسٹیج اور ریڈیو کے سنئیر اداکار، رائٹر اور ڈائریکٹر عرفان کھوسٹ نے لاہور ، ثقافت اور تھیٹر کی روایت کو زندہ رکھنے کے لیے ویک اینڈ تھیٹر فیسٹیول کرائینگے۔

اس حوالے سے پریس کانفرنس کی جس میں رائٹر اصغر ندیم سید، سرمد سلطان کھوسٹ ، سمیعہ ممتاز، کنول کھوسٹ ، عرفان کھوسٹ ، سیدنور سمیت دیگر شخصیات موجود تھیں۔ اس موقع پرعرفان کھوسٹ نے پریس بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ اس فیسٹیول کے لیے انگریزی ، اردو اور پنجابی زبان کے آٹھ ڈراموں کا انتخاب کیا گیا ہے جس میں اداکار قوی خان ، فردوس جمال ، اورنگزیب لغاری، ثانیہ سعید ، نعمان اعجاز، سرمد کھوسٹ، نائلہ جعفری ،نمرہ بچہ، سمیہ ممتاز، نگہت چوہدری اور جوشندر چگھڑ جیسے سنیئرز کا تعاون حاصل ہے ۔

ان کے علاوہ بی بی سی شعہ اردو کے ہیڈ اور ناول نگار محمد حنیف، معروف انڈین فلم اور ڈرامہ رائٹر جاوید صدیقی اور مشہور برطانوی جرنلسٹ اور مصنف مارک ریون ہل کے ساتھ نئے کہانی نویسوں کی کہانیاں بھی اس فیسٹیول کی زینت بنیں گی ۔اس سلسلہ میں پہلا ڈرامہ 22نومبر کو الحمراء آرٹ کونسل میں دکھایا جائے گا جب کہ ان کے علاوہ شاہی قلعہ ، این سی اے ، ٹریڈ سینٹر اور قذافی اسٹیڈیم میں دکھائے جائینگے ۔ انھوںنے کہا کہ میں یوسف صلاح الدین سے بھی درخواست کرتا ہوں کہ ہمیں ڈرامہ کو اوریجنل لوکیشن پرکرنے کے لیے تعاون کریں۔

انھوں نے مزید بتایا کہ تھیٹر کی روایت کو فروغ دینے کے لیے 70فیصد داخلہ بذریعہ دعوت نامہ اور 30فیصد ٹکٹ کے ذریعے ہوگا ۔ ٹکٹ سے جمع ہونے والی رقم کا پچاس فیصد حکومت کے زیرانتظام ادارہ آرٹسٹ ویلفیئر ایسوسی ایشن میں جمع کروایا جائے گا ۔ ڈراموں کے ساتھ ورکشاپس اور کہانی گوئی کا بھی انتظام کیا جائے گا۔اس موقع پر سرمد سلطان کھوسٹ نے کہا کہ ہمارا مقصد معیاری تھیٹر کو فروغ دینا اور فیملیوں کو واپس لانا ہے جس میں میڈیا کے بھرپور تعاون کی ضرورت ہے ۔ س موقع پر سیدنور نے کہا کہ عرفان کھوسٹ اور اس کی ٹیم کو مبارکباد پیش کرتا ہوں کیونکہ اس سے فلم اور تھیٹر دونوں کو اس طرح کی سرگرمیوں کی بہت ضرورت ہے جس کے لیے میری خدمات حاضر ہیں۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔