لاہور میں لیڈی پولیو ورکر کا قاتل اس کا اپنا ساتھی نکلا

ویب ڈیسک  بدھ 17 جولائ 2019
بشرٰی کے گلے میں پھندا ڈال کر قتل کیا اورلاش نہر میں پھینک دی، ملزم کا اعتراف۔ فوتو:ایکسپریس

بشرٰی کے گلے میں پھندا ڈال کر قتل کیا اورلاش نہر میں پھینک دی، ملزم کا اعتراف۔ فوتو:ایکسپریس

لاہور: پولیس کا کہنا ہے کہ مناواں کے علاقے میں لیڈی پولیو ورکر اس کے ساتھ کام کرنے والے نے ہی قتل کیا۔

ایکسپریس نیوزکے مطابق لاہور مناواں کے علاقے میں قتل ہونے والی لیڈی پولیو ورکر کے قتل کا ڈراپ سین ہوگیا، مقتولہ کو اس کے ساتھی پولیو ورکر نے قتل کیا، اور پولیس نے ملزم کو گرفتار کرلیا ہے۔

انویسٹی گیشن پولیس مناواں کے سب انسپکٹر ناصر خان کے مطابق تقریباً ایک ماہ قبل 24 سالہ لڑکی کی نعش بی آربی نہر سے ملی، خاتون کی شناخت بشرٰی کے نام سے ہوئی جو کہ پولیو ورکر تھی، واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے ایس ایس پی انویسٹی گیشن ذیشان اصغر نے قتل کی تحقیقات کے لئے خصوصی ٹیم تشکیل دی جس نے ملزم عابد علی کو ٹریس کرکے گرفتار کرلیا۔

ملزم عابد علی نے دوران تفتیش بتایا کہ وہ خود بھی پولیو ورکر ہے اور مقتولہ کے ساتھ ہی کام کرتا تھا، اس نے مقتولہ کے کزن کو ملازمت پر رکھوانے کے لیے بطور رشوت 40 ہزار روپے لے رکھے تھے، تاہم بشریٰ کے کزن کو بھرتی نہ کروا سکا، جس پر بشریٰ نے پیسوں کی واپسی کا تقاضا کیا اور تنگ کرنا شروع کردیا۔

ملزم عابد نے اعتراف کیا کہ اس نے مقتولہ کو رقم واپس دینے کے بہانے بلایا اور اسے مشروب میں نشہ آور گولیاں کھلا کر بے ہوش کر دیا، اور بی آر بی نہر کے پاس لے گیا، وہاں  بشرٰی کے گلے میں پھندا ڈال کر قتل کیا اور نعش بی آر بی نہر میں پھینک دی۔ مقتولہ بشریٰ کی نعش پانی کے بہاؤ میں بہہ گئی جو بعد ازاں تھانہ صدر قصور کے علاقے سے ملی۔

 

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔