عید کے بعد ملک گیر شٹر ڈاؤن ہڑتال، تاجروں کے رابطے تیز

جمیل مرزا  منگل 30 جولائ 2019
نئی سرمایہ کاری نہیں ہو رہی، رئیل اسٹیٹ پر جمود طاری، معیشت کا چلتا پہیہ رک چکا ہے، مرکزی انجمن تاجران
 فوٹو: فائل

نئی سرمایہ کاری نہیں ہو رہی، رئیل اسٹیٹ پر جمود طاری، معیشت کا چلتا پہیہ رک چکا ہے، مرکزی انجمن تاجران فوٹو: فائل

 راولپنڈی:  تاجر تنظیموں نے اپنے مطالبات کے حق میں عید الا ضحی کے بعد ملک گیر سطح پر 2یا 3دن کی مکمل شٹر ڈاون ہڑتال کے لیے باہمی رابطوں اور مشاورت کا سلسلہ شروع کردیا تاہم تاریخ کا تعین ہو جانے پر ہڑتال کا اعلان کردیا جائے گا۔

گزشتہ 15 دنوں سے ایک مرتبہ پھر ہڑتال کے لیے جاری رابطوں میں مزید تیزی آچکی ہے مرکزی انجمن تاجران پنجاب کے صدر ملک شاہد غفور پراچہ نے ایکسپریس سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ موجودہ حکومت کی معاشی پالیسیوں ٹیکسوں کی بھر مار کے نتیجے میں اس وقت کاروباری سرگرمیاں دم توڑ چکی ہیں نئی سرمایہ کاری نہیں ہورہی ، رئیل سٹیٹ کے شعبہ پر مکمل جمود طاری ہے اور عملاً لک کی معیشت کا چلتا پہیہ رک چکا ہے۔

ایسی صورت حال میں جب کاروباری مراکز میں چھٹی کا سماں ہے اور تاجر طبقے کے لیے اپنے اخراجات تک پورے کرنا ناممکن ہو کررہ گیا ہے تو ایک مرتبہ پھر ہڑتا ل کرنے کے علاوہ کوئی آپشن موجود نہیں ملک شاہد غفور پراچہ نے بتایا کہ عیدلاالضحی کے بعد ہڑتال کرنے کے فیصلے پر اتفاق رائے ہوچکا ہے تاہم تاریخ کے تعین اور دو یا تین دن کی ہڑتال بارے فیصلہ ہونا باقی ہے اور اس مرتبہ ہڑتال پہلے سے بھی زیادہ کامیاب ہوگی کیونکہ تاجر طبقہ سخت مایوسی کا شکار ہو کررہ گیا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل تاجر تنظیموں کی کال پر ملک گیر سطح پر13 جولائی کو مکمل شٹرڈاون ہڑتال ہو چکی ہے تاہم اس کامیاب ترین ہڑتال کے بعد بھی چیئرمین ایف بی آر سید شبر رضا کی جانب سے شناختی کارڈ کی شرط برقرار رکھنے اور تاجروں کے دیگر مطالبات تسلیم نہ کرنے کا واضح موقف اپنا یا گیا تھا جس پر دوبارہ ہڑتال کے لیے تاجر تنظیموں کے قائدین نے اتفاق کرتے ہوئے آئندہ کے لائحہ عمل کے لیے مشاورت کرنے کا اعلان کیا تھا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔