آصف علی اور محمد نواز نے ناردرن کی یقینی شکست کو ٹال دیا

اسپورٹس رپورٹر  بدھ 18 ستمبر 2019
سینٹرل اور سدرن پنجاب، سندھ و بلوچستان کے مقابلے بھی غیرفیصلہ کن ثابت،امام الحق نے 152رنز کی اننگز کھیلی۔ فوٹو: فائل

سینٹرل اور سدرن پنجاب، سندھ و بلوچستان کے مقابلے بھی غیرفیصلہ کن ثابت،امام الحق نے 152رنز کی اننگز کھیلی۔ فوٹو: فائل

 لاہور / عباس رضا:  قائد اعظم ٹرافی میں آصف علی اور محمد نواز نے ناردرن کی یقینی شکست کو ٹال دیا اور دونوں نے خیبر پختونخوا کیخلاف سنچریاں جڑ دیں۔

ایبٹ آباد اسٹیڈیم میں میچ کے دوسرے روز خیبر پختونخوا نے 9وکٹ پر 526رنز بنائے تھے۔ ناردرن ٹیم 262پر آؤٹ ہوکر فالوآن کا شکار ہوئی، اس نے دوسری باری میں 2وکٹ پر 105رنز اسکور کیے تھے،گذشتہ روز 159رنز کا خسارہ لیے اننگز کا دوبارہ آغاز کیا، عمرامین(32) اور روحیل نذیر(21) نے کریز سنبھالی تو شکست کے آثار نمایاں تھے لیکن روحیل نذیر(46)کے بعد عمرامین(80)کی مزاحمت نے بچ نکلنے کی امید دلائی۔

بعد ازاں آصف علی کے114رنز اور محمد نواز کی ناقابل شکست سنچری کی بدولت ناردرن نے 6وکٹ پر 433رنز کے ساتھ اننگز کا اختتام کیا،شاداب خان4رنز بنا سکے، سہیل تنویر 29پر ناٹ آؤٹ رہے،زوہیب خان2 وکٹیں حاصل کرنے میں کامیاب رہے۔

قذافی اسٹیڈیم میں سدرن پنجاب کیخلاف سینٹرل پنجاب نے 5وکٹ پر 348رنز جوڑے تھے،گذشتہ روز محمد سعد41اور فہیم اشرف30رنز کے ساتھ کریز پر دوبارہ آئے، دونوں بالترتیب 70اور56 رنزکی اننگز کھیلنے میں کامیاب رہے، ظفر گوہر نے22 رنز بنائے،حسن علی نے کھاتہ نہیں کھولا،وقاص مقصود نے20رنز اسکور کیے اوربلال آصف 26پر ناٹ آؤٹ رہے۔

ٹیم کی اننگز کا اختتام473پر ہوا،سدرن پنجاب نے اپنی دوسری باری میں ایک وکٹ پر 107رنز بنائے،شان مسعود32پر رخصت ہوئے، سمیع اسلم50اور عمر صدیق 18پر ناٹ آؤٹ رہے۔ یو بی ایل اسپورٹس کمپلیکس کراچی میں سندھ نے اپنی اننگز 5وکٹ پر 473رنز بناکر ڈیکلیئرڈ کردی تھی۔

جواب میں بلوچستان نے 3وکٹ پر 191رنز بنائے تھے،گذشتہ روز امام الحق 111اور عمران فرحت 16رنز کے ساتھ کریز پر آئے، عمران اسکور میں مزید کوئی اضافہ کیے آؤٹ ہوئے،آصف ذاکر11اور بسم اللہ خان 26رنز بنا سکے، امام الحق نے 152رنز کی اننگز کھیلی،نمبر 10بیٹسمین خرم شہزاد 44پر ناٹ آؤٹ رہے، بلوچستان کرکٹ ٹیم نے9وکٹ پر 355 رنز بنائے تھے کہ وقت ختم ہوگیا، کاشف بھٹی اور اسد شفیق نے 3،3 کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔

قائد اعظم ٹرافی:کوکابورا نے بولرز کا حال براکردیا

پاکستان کرکٹ بورڈ نے نیا ڈومیسٹک اسٹرکچر متعارف کرتے ہوئے ڈپارٹمنٹس اور ریجنز کی ٹیمیں ختم کرنے کے ساتھ کوکا بورا گیند کے استعمال کا بھی فیصلہ کیا لیکن یہ تجربہ بولرز کو راس نہیں آیا،سب سے بڑی اننگز 9وکٹ پر 526رنز خیبر پختونخوا کی جانب سے ایبٹ آباد اسٹیڈیم میں دیکھنے میں آئی،محمد رضوان 176کی اننگز کھیلنے میں کامیاب ہوئے،اشفاق احمد نے بھی سنچری بنائی۔

جواب میں ناردرن ٹیم 262پر ڈھیر اور فالو آن کا شکار ہوئی لیکن دوسری باری میں آصف علی اور محمد نواز کی تھری فیگر اننگز کی بدولت 6وکٹ پر 433رنز بناکر شکست کو ٹال دیا۔

اس میچ میں مجموعی طور پر 1221رنز بنے اور 25وکٹیں گریں۔قذافی اسٹیڈیم لاہور میں سدرن پنجاب نے 467کا مجموعہ حاصل کیا، اس میں سمیع اسلم کی ڈبل سنچری اور عدنان اکمل کی تھری فیگر اننگز شامل تھی،سینٹرل پنجاب نے جواب میں 473رنز جوڑے،سدرن پنجاب نے اپنی دوسری باری میں ایک وکٹ پر 107رنز بنائے،مجموعی طور پر اس میچ میں 1047رنز بنے اور 21وکٹیں گریں۔

یوبی ایل اسپورٹس کمپلیکس کراچی میں سندھ نے 5وکٹ پر 473کا ٹوٹل حاصل کیا،اس میں عابد علی کی ڈبل سنچری اور خرم منظور کی تھری فیگر اننگز شامل تھی،بلوچستان نے جواب میں 9وکٹ پر 355رنز بنائے،امام الحق نے152کی اننگز کھیلی،میچ میں مجموعی طور پر 828رنز بنے اور 14وکٹیں گریں۔

تینوں میچز میں مجموعی طور پر 3096رنز بنے اور 60وکٹیں گریں، یوں بیٹسمینوں نے فی وکٹ 51.50کی اوسط سے رنز بنائے،2ڈبل سنچریاں بنیں، 7تھری فیگر اننگز بھی شامل تھیں، کوئی بولر 5وکٹوں کا کارنامہ سرانجام نہیں دے سکا،چند کرکٹرز نے نام نہ ظاہر کرنے کی شرط پر بتایا کہ کوکا بورا گیند کے موثر استعمال کیلیے زیادہ زور لگانا پڑتا ہے لیکن تبدیلی سے قبل پریکٹس کا موقع نہیں ملا،ٹیموں کے تربیتی کیمپس نہ لگانے کا بھی نقصان ہوا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔