پاکستان کینگروز کو جلد ٹھکانے لگانے کیلیے کوشاں

اسپورٹس رپورٹر  جمعـء 22 نومبر 2019
صلاحیتوں کا زیادہ اعتراف نہ کیے جانے سے کوئی فرق نہیں پڑتا،سینئربیٹسمین

صلاحیتوں کا زیادہ اعتراف نہ کیے جانے سے کوئی فرق نہیں پڑتا،سینئربیٹسمین

 لاہور:  پاکستان مشکل پچ پر کینگروزکو جلد ٹھکانے لگانے کیلیے کوشاں ہے۔

برسبین ٹیسٹ میں پہلے روز کا کھیل ختم ہونے کے بعد میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے اسد شفیق نے کہا کہ پچ اور کنڈیشنز آسان نہیں تھیں، اوپنرز نے نئی گیند کا بہتر انداز میں سامنا کیا، اچھے آغاز کے بعد مڈل آرڈر میں وکٹیں مسلسل گرنے کے بعد بہتر ٹوٹل کیلیے شراکتوں کی ضرورت تھی، میں نے گیند کو تھوڑا لیٹ کھیلنے کی حکمت عملی اپنائی اور ٹیم کے ٹوٹل میں بڑا حصہ ڈالنے میں کامیاب رہا۔

انھوں نے کہا کہ یاسر شاہ نے بھی مشکل وقت میں ساتھ دیتے ہوئے اہم شراکت بنانے میں کردار ادا کیا، آسٹریلوی بولرز نے اچھی لائن لینتھ پر بولنگ کرتے ہوئے ہمارے لیے مشکلات پیدا کیں۔ مہمان ٹیم توقعات کے مطابق ٹوٹل تو حاصل نہیں کرسکی لیکن پچ کی صورتحال کو دیکھتے ہوئے امید کی جا سکتی ہے کہ پاکستانی بولرز بھی ابتدا میں ہی وکٹیں حاصل کرتے ہوئے کینگروز کو دباؤ میں لانے میں کامیاب ہوجائیں گے۔

آسٹریلیا میں مسلسل اچھی کارکردگی کے سوال پر اسد شفیق نے کہا کہ میں ہمیشہ کوشش کرتا ہوں کہ ٹیم کیلیے رنز بناؤں، خوش ہوں کہ اس بار بھی ایسا کرنے میں کامیاب رہا، ٹاپ کوالٹی بولنگ کے خلاف کارکردگی سے لطف اندوز ہورہا ہوں، اس سے اعتماد میں مزید اضافہ ہوا ہے۔

میڈیا میں صلاحیتوں کا زیادہ اعتراف نہ کیے جانے کے سوال پر انھوں نے کہا کہ مجھے اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا، میں صرف پاکستان کے لیے کھیلنے،کارکردگی دکھانے کو اہمیت دیتا اور اسی پر توجہ مرکوز رکھتا ہوں۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔