شہر میں بجلی کا نظام درہم برہم، حکومت خاموش تماشائی

اسٹاف رپورٹر  ہفتہ 4 جولائ 2020
کنیپ سے بجلی کی فر اہمی معطل ہو نے پر اضافی لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے،کے الیکٹرک (فوٹو: فائل/ایکسپریس)

کنیپ سے بجلی کی فر اہمی معطل ہو نے پر اضافی لوڈشیڈنگ کی جا رہی ہے،کے الیکٹرک (فوٹو: فائل/ایکسپریس)

کراچی: کے الیکٹرک نے اس بار کینپ سے صرف 60 میگاواٹ بجلی کے تعطل کو جواز بنا کر شہر میں بدترین لوڈشیڈنگ شروع کر دی جب کہ شہر میں بجلی کانظام درہم بر ہم ہو گیا۔

کراچی ان دنوں شدید گرمی کی لپیٹ میں ہے جس کی وجہ سے بجلی کی طلب میں اضافہ ہو گیا لیکن کے الیکٹرک شہر میں بلاتعطل بجلی فر اہم کرنے میں ایک بار پھر ناکام ثابت ہوا، کچھ دن قبل کے الیکٹرک نے اضافی لو ڈشیڈنگ کی وجہ گیس اور فرنس آئل میں کمی کو قرار دیا تاہم حکومت نے کے الیکٹرک کی تمام فرمائشوں کو پورا کردیا۔

گیس میں50 ایم ایم سی ایف ڈی کا اضافہ کر دیا تاہم اب کے الیکٹرک نے شہر میں بدترین لوڈشیڈنگ کا سبب کینپ سے صرف 50 میگاواٹ بجلی کے تعطل کو قرار دے دیا ،جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب نصف شہر صرف 60 میگاواٹ کی کمی کا جواز بنا کر بند کردیے گئے شہری رات بھر جاگ کر گزار نے پر مجبو رہو گئے۔

کے الیکٹرک شہریوں کو خون کے آنسو رولا دیا ہے نہ دن میں بجلی فر اہم کی جارہی ہے اور نہ رات کو دی جا رہی ہے جس کی وجہ سے شہر ی اذیت کا شکا ر ہو گئے، شہر کے مختلف علاقے جن میں کورنگی، لانڈھی ،ملیر، سرجانی ٹاؤن، شو مارکیٹ، لیاقت آباد، گلشن معمار، احسن آباد سمیت دیگرعلاقوں میں12 گھنٹے کے لیے بجلی بند کی جارہی ہے، مستثنیٰ علاقوں میں 4گھنٹے بعد ایک گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پرائیویٹ کمپنی کے الیکٹرک صرف سستی بجلی پر انحصار کرتی ہے، صرف 60 میگاواٹ کی کمی کا جواز بنا کر پورے شہر میں بجلی کانظام درہم بر ہم ہو کر رہ گیا ہے۔

کے الیکٹرک نیشنل گرڈ اور سبسڈائز بجلی پر انحصار کرتی ہے کر اچی میں بجلی کی طلب میں جب اضافہ ہو ا ہے کے الیکٹرک بلاتعطل بجلی فر اہم کرنے میں ناکام ثابت ہو ئی ہے کر اچی میں بدترین لو ڈشیڈنگ کی وجہ سے شہر میں پانی کا بحران بھی پیدا ہو نا شروع ہوگیا پمپنگ اسٹیشنوں پر بجلی بند ہونے سے پانی کی فر اہمی بھی متاثر ہورہی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ کراچی میں بدترین لوڈشیڈنگ پر وفاق، سند ھ حکومت کی جانب سے کو ئی باز برس نہیں کی جارہی ہے ،ذرائع نے بتایا کہ کے الیکٹرک انتہائی بااثر پرائیویٹ ادارہ ہے جو کسی کو خاطر میں نہیں لا تا یہ ہی وجہ سے ہے کر اچی کے شہری اوور بلنگ ، بد تر ین لو ڈشیڈنگ سہنے پر مجبور ہیں۔

شہریوں کا کہنا ہے کہ کے الیکٹرک نے جب سے امور سنبھالے ہیں بجلی کا نظام درہم بر ہم ہوگیا ، اوور بلنگ اور بد ترین لو ڈشیڈنگ کر اچی کے شہریوں کا مقدر بن چکا ہے اس میں بہتر ی اب نا ممکن ہی نظر آتی ہے۔ شہریوں نے چیف جسٹس سے مطا لبہ کیا ہے کہ کراچی میں بد تر ین لوڈشیڈنگ اور اوور بلنگ کا نوٹس لے۔

دوسری جانب ترجمان کے الیکٹرک کا کہنا ہے کہ کنیپ سے 60 میگا واٹ کی کمی کاسامنا ہے جس کی وجہ سے چند علاقوں میں لو ڈشیڈنگ میں اضافہ ہوسکتا ہے ،کے الیکٹرک دیگر ذرائع سے بجلی کی فر اہمی ممکن بنانے کے لیے کوشاں ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔