تاریخ کی تیز ترین بارشوں کے اگلے دن کراچی میں زندگی رواں دواں ہے، ناصر شاہ

ویب ڈیسک  بدھ 26 اگست 2020
حکومتی ترجمان مثبت کردار ادا کرنے کے بجائے اس قدرتی آفت میں منفی سیاست کررہے ہیں، وزیربلدیات۔ فوٹو:فائل

حکومتی ترجمان مثبت کردار ادا کرنے کے بجائے اس قدرتی آفت میں منفی سیاست کررہے ہیں، وزیربلدیات۔ فوٹو:فائل

کراچی: وزیربلدیات سندھ ناصر حسین شاہ کا کہنا ہے کہ 90 سالہ تاریخ کی تیز ترین بارشوں کے آج اگلے دن کراچی میں زندگی رواں دواں ہے۔

سندھ کے وزیر بلدیات و اطلاعات ناصر شاہ کا کہنا ہے کہ کراچی میں 90 سالہ تاریخ کی تیز ترین بارشیں ریکارڈ کی گئیں، تاریخی برسات کے ختم ہوتے ہی پانی کی نکاسی کا عمل شروع کردیا گیا، صوبے کے تمام محکمے فعال رہے، اس دوران وزراء سمیت اراکین اسمبلی بھی عوام کے ہمراہ رہے، اور محکمہ بلدیات کے عملے نے رات بھر نکاسی کے عمل کو مکمل کیا۔

وزیربلدیات کا کہنا تھا کہ عوامی نمائندے سندھ کے مختلف شہروں میں تیز ترین برسات کے بعد پیدا ہونے والی صورت حال پر قابو پانے کی کوشش کررہے ہیں، مشرف دور میں اس سے کم بارشیں ہوئی تھیں لیکن 4 دن تک کراچی بند رہا تھا، جب کہ 90 سالہ تاریخ کی تیز ترین بارشوں کے آج اگلے دن کراچی میں زندگی رواں دواں ہے۔

ناصرشاہ نے کہا کہ افسوس کے ساتھ کہنا پڑھ رہا ہے کہ اس قومی آفت کے دوران وفاق نے سندھ کو لاوارث چھوڑدیا، حکومتی ترجمان مثبت کردار ادا کرنے کے بجائے اس قدرتی آفت میں منفی سیاست کررہے ہیں، کراچی کے پریشر گروپس دنیا کے مختلف ممالک میں بارشوں سے تباہی کی ویڈیوز کو کراچی کی ثابت کرکے پروپیگنڈا بھی کرتے رہے، تاریخی برسات کے موقع پر کراچی کے میئر کی بنیادی ذمہ داری تھی مگر وہ کہیں نظر نہ آئے۔

صوبائی وزیر کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت نے برسات کے پانی کی نکاسی کرکے اپنا کردار خوبی سے ادا کیا ہے، تاہم جب تک پرویز مشرف کے دور میں نالوں پر ہونے والی تجاوزات کا خاتمہ نہیں ہوگا کراچی میں نکاسی آب کا مسئلہ حل نہیں ہوسکتا، کراچی کے شہریوں کو اذیت میں مبتلا کرنے کی ذمہ دار وہ قوتیں ہیں کہ جنہوں نے نالوں پر قبضے کئے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔