برطانوی شخص نے ٹینک کی ٹیکسی سروس شروع کردی

ویب ڈیسک  جمعرات 11 نومبر 2021
برطانوی شخص ٹینک نما سواری کو فی الحال جنازوں اور باراتوں میں استعمال کرتے ہیں جس کے لیے وہ 1000 ڈالر کی رقم وصول کرتے ہیں۔ فوٹو: یوپی آئی

برطانوی شخص ٹینک نما سواری کو فی الحال جنازوں اور باراتوں میں استعمال کرتے ہیں جس کے لیے وہ 1000 ڈالر کی رقم وصول کرتے ہیں۔ فوٹو: یوپی آئی

 لندن: برطانوی شخص نے دنیا کی منفرد اور انوکھی ’ٹینک ٹیکسی سروس‘ شروع کردی جو دنیا کی مہنگی ترین ٹیکسی سروس ہے اور اس کا کرایہ کم از کم 1000 ڈالر رکھا گیا ہے۔

برطانوی شہر ناروچ سے تعلق رکھنے والے شہری مرلن بیچلر کا یہ ٹینک درحقیقت ایک بکتر بند گاڑی ( اے پی سی) ہے جس کےنیچے ٹینک کی طرح زنجیر لگی ہے۔ مرلن نے اسے خرید کر اس کی مرمت کی ہے جس پر کل 35 ہزار ڈالر کی رقم خرچ ہوئی ہے اور اب لوگ بڑے شوق سے اس پرسوار ہوکر شادیوں میں جاتے ہیں یا پھر اسے جنازوں کے لیے بھی استعمال کیا جارہا ہے۔

’پہلے پڑوسیوں، پھر دوستوں، اور دوستوں کے دوستوں کے بعد عام افراد نے ان سے رابطہ کیا اور سب اس میں سوار ہونا چاہتے تھے۔ اب وہ خاص تقاریب، شادیوں اور جنازوں وغیرہ میں اپنی گاڑی نکالتے ہیں اور ایک چکر کے 1000 ڈالر لیتے ہیں۔

وہ کہتے ہیں کہ یہ سروس خالص تفریحی مقاصد کے لیے ہے کیونکہ جب وہ اور ان کے مسافر سڑک سے گزرتے ہیں تو لوگ انہیں مسرت سے دیکھتے ہیں اور ہاتھ ہلاتے ہیں۔ مرلِن کے مطابق اس ٹینک نما سواری کے انشورنس اخراجات ان کی خاندانی ہونڈا سوک گاڑی سے بھی کم ہیں۔ بسا اوقات بچے اس میں بیٹھ کر خریداری کرنے بھی جاتے ہیں۔

اب مرلن کوشش کررہے ہیں کہ کسی طرح سیر و تفریح، سالگرہ اور دیگر تقاریب کے لیے انہیں لائسنس مل جائے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔