گاربین مگروزا کے کیریئر میں نیا موڑ

عبد العزیز  اتوار 21 نومبر 2021
اسپینش اسٹار نے حریفوں کیلئے خطرے کی گھنٹی بجادی

اسپینش اسٹار نے حریفوں کیلئے خطرے کی گھنٹی بجادی

اسپینش ٹینس اسٹار گاربین مگروزا نے گذشتہ دنوں سیزن کی اختتامی ڈبلیو ٹی اے ٹرافی جیت کر ناقدین کو حیران کردیا۔

گذشتہ چند برسوں سے انھیں مطلوبہ نتائج حاصل نہیں ہوپارہے تھے لیکن دنیا کی ٹاپ 8 پلیئرز کے ایونٹ میں ان کی بے مثال پرفارمنس نے آنے والے سیزن میں حریفوں کے لیے خطرے کی گھنٹی بجادی ہے، مگروزا نے فائنل میں اسٹونیا کی اینیٹ کونٹا ویٹ کو شکست سے دوچار کیا تاہم وہ بھی فائنل تک رسائی کی بنیاد پر عالمی رینکنگ میں بہتری کی حقدار بنیں، چار برس قبل گاربین نے ومبلڈن فائنل میں سرینا ولیمز کو شکست دیکر کیریئر کا پہلا گرینڈ سلم اپنے نام کیا تھا، اس وقت وہ دنیائے ٹینس میں بلندی پر دکھائی دے رہی تھیں لیکن اس کے بعد وہ پرفارمنس میں تسلسل برقرار نہیں رکھ پائیں۔

اس وقت 23 سال کی مگروزا نے تمام طرز کے میدانوں میں اپنی مہارت کا لوہا منوایا، اسی دوران انھوں نے عالمی رینکنگ میں ٹاپ پوزیشن بھی پائی اور اسے 4 ہفتوں تک برقرار بھی رکھا تھا ، تاہم اس کے بعد اگلے 3 برسوں میں وہ خاطرخواہ پرفارمنس پیش نہیں کرپائیں، تاہم اب 28 سالہ مگروزا نئے انداز میں واپس آئی اور ان کے کیریئر میں ایک نیا موڑ نظر آرہا ہے، وہ سیزن کے اختتام پر عمررسیدہ چیمپئن بننے کا اعزاز بھی پانے میں کامیاب رہیں، ان سے قبل یہ منفرد اعزاز 7 برس پہلے سرینا ولیمز کو ملا تھا، اس موقع پر جذبات کا اظہار کرتے ہوئے مگروزا کا کہنا تھا کہ حالیہ فتح نے مجھے آئندہ برس کے لیے بہترین پوزیشن میں لا کھڑا کیا ہے، میں اس پر بہت خوش اور مطمئن ہوں اور اپنے عمدہ کھیل کا سلسلہ نئے سیزن میں بھی جاری اور برقرار رکھنا چاہوں گی۔

دوسری جانب سیزن کے اختتامی ایونٹ کی ڈبلز ٹرافی جمہوریہ چیک کی باربورا کرائیجیکووا اور کیٹرینا سیناکووا کے نام رہی، انھوں نے فائنل میں چائنیز تائپے کی ہائش سو وائی اور بیلجیئم سے تعلق رکھنے والی الیسی مارٹنز کو زیر کیا، فاتح جوڑی نے پہلی بار سیزن کے اختتامی ایونٹ کی ڈبلز ٹرافی قبضے میں کی ہے۔

اس کامیابی کیساتھ ہی سیناکووا نے رینکنگ میں ٹاپ پوزیشن بھی یقینی بنالی، وہ اب ہائش سو وائی کی جگہ اس پوزیشن پر فائز ہوں گی، جمہوریہ چیک کی جوڑی نے سیزن میں پانچواں ٹائٹل جیتا، وہ اس سے قبل فرنچ اوپن اور اولمپک گولڈ میڈل بھی نام کرچکی ہیں، سیزن کی اختتامی چیمپئن شپ میں اس سے قبل ان کی بہترین پرفارمنس 2018 میں رنر اپ کے طور پر اختتام کرنا تھی،3 برس قبل ٹیمیا بابوس اور کرسٹینا میلڈینووک نے انھیں فائنل تک محدود کردیا تھا، ادھر سیزن کے اختتامی اے ٹی پی میں عالمی نمبرون نووک جوکووچ نے سیمی فائنل مرحلے تک رسائی پالی ہے۔

وہ سیزن کے اختتام بطور نمبرون پلیئر کرنا بھی یقینی بناچکے، سربیئن اسٹار فائنل 4 میں جرمنی کے الیگزینڈر زیوریف کا سامنا کریں گے، جوکووچ نے را?نڈ روبن مرحلے میں کیسپر رووڈ اور آندرے روبیلوف کیخلاف فتوحات سمیٹی ہیں، ویمنز اور مینز ٹینس میں چند ابھرتے ہوئے اسٹارز کو دیکھتے ہوئے کہا جاسکتا ہے کہ آئندہ سیزن میں چند بڑے ناموں کو سخت چیلنج کا سامنا ہوگا، فٹنس اور فارم برقرار رکھنے والے ہی دنیا بھر سے آنے والے نئے ٹیلنٹ کا بہتر انداز میں مقابلہ کرسکیں گے،آف سیزن میں بھی سپر اسٹارز کسی تساہل پسندی کا شکار نہیں ہوتے اور یہی ان کی کارکردگی میں تسلسل کی سب سے بڑی وجہ ہے،نئے سیزن میں بھی برتری کی جنگ لڑنے والے کھلاڑی شائقین کی بھرپور توجہ کا مرکز بنے رہیں گے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔