نایاب پرندوں کے گیت نے مقبولیت میں ٹیلر سوئفٹ کو پیچھے چھوڑ دیا

ویب ڈیسک  منگل 11 جنوری 2022
آسٹریلیا کے نایاب پرندوں کی چہچہاہٹ پر مبنی آوازوں کے البم نے غیرمعمولی مقبولیت حاصل کی ہے۔ فوٹو: بشکری این پی آر

آسٹریلیا کے نایاب پرندوں کی چہچہاہٹ پر مبنی آوازوں کے البم نے غیرمعمولی مقبولیت حاصل کی ہے۔ فوٹو: بشکری این پی آر

پرتھ: آسٹریلیا سے ایک دلچسپ خبرآئی ہے کہ سال کے اختتام پر گیتوں والے البم کی دوڑ میں ناپیدگی کے قریب پرندوں کی مدھر چہچہاہٹ پر مبنی ایک پورے البم نے اسٹریلیا ٹاپ 50 آڈیو البم کی فہرست میں تیسری جگہ بنالی ہے اور یوں مقبولیت میں ٹیلرسوئفٹ کو پیچھے چھوڑدیا ہے۔

مجموعی طور پر 53 پرندوں کی آوازیں اس میں شامل ہیں اور دیگر معلومات جمع کرکے ایک باقاعدہ البم کی شکل دی گئی ہے۔

یہ البم موسیقاراورچارلس ڈارون یونیورسٹی میں پی ایچ ڈی طالبعلم اینتھونی ایلبریخت نے ترتیب دی ہے جس میں آسٹریلیا کے ان نایاب ترین پرندوں کی چہچہاہٹ شامل ہیں جو ناپید ہونے کے قریب پہنچ چکے ہیں۔ البم کی ساری آمدنی برڈلائف آسٹریلیا نامی تنطیم کو دی جائے گی جو ان پرندوں کو بچانے کی سرتوڑ کوشش کررہی ہے۔ یہ تنظیم ان پرندوں سے آگہی اور شعور بھی پھیلارہی ہے۔

ماہرین نے پرندوں کی خوبصورت آوازوں کے البم کو ’پرندوں کا آرکیسٹرا‘ قرار دیا ہے۔ اس ضمن میں چارلس ڈارون یونیورسٹی نے پرندوں سے محبت کرنے والے تمام لوگوں سے کہا ہے کہ وہ ان معصوم جانوروں کی آواز اور معلومات آگے پہنچائیں تاکہ اس بیش بہا قدرتی خزانے کو بچایا جاسکے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔