امریکی پابندی کے چند گھنٹے بعد ہی شمالی کوریا کا بیلسٹک میزائل کا تجربہ

ویب ڈیسک  جمعـء 14 جنوری 2022
شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان نے ملک کا دفاع مزید مضبوط بنانے کااعلان کیا تھا:فوٹو:فائل

شمالی کوریا کے رہنما کم جونگ ان نے ملک کا دفاع مزید مضبوط بنانے کااعلان کیا تھا:فوٹو:فائل

سیئول: شمالی کوریا نے امریکی پابندیوں کو سالمیت کے لیے ’خطرہ‘ قرار دیتے ہوئے دوہفتوں میں تیسرا بیلسٹک میزائل کا تجربہ کیا ہے۔ 

اس سے قبل بیلسٹک میزائل فائر کیے جانے پر پیانگ یانگ کو پہلے ہی امریکا کی جانب سے تنقید کا سامنا ہے اور واشنگٹن نے نئی پابندیاں بھی عائد کی ہیں۔ امریکی تنقید کے محض چند گھنٹوں بعد ہی شمالی کوریا نے دو بیلسٹک میزائل فائر کیے۔

مزیدپڑھیں: شمالی کوریا کا 6 روز میں بیلیسٹک میزائل کا دوسرا تجربہ

جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف اسٹاف (جے سی ایس) نے کہا کہ شمالی کوریا نے دو مختصر فاصلے تک مار کرنے والے بیلسٹک میزائل شمالی کوریا کے مغربی ساحل پر چین کی سرحد کے قریب شمالی پیونگن صوبے سے مشرق کی طرف داغے ہیں۔

جاپان کے ساحلی محافظوں نے یہ بھی اطلاع دی کہ شمالی شمالی نے فائر کیے جو ایک بیلسٹک میزائل ہو سکتا ہے۔ شمالی کوریا نے خبردار کیا کہ اگر امریکا مسلسل پابندی لگاتا رہا تو سنگین نتائج ہوں گے۔

براڈکاسٹر این ایچ کے نے جاپانی وزارت دفاع کے ایک نامعلوم اہلکار کے حوالے سے رپورٹ کیا کہ ایسا لگتا ہے کہ میزائل جاپان کے خصوصی اقتصادی زون کے باہر سمندر میں گرے ہیں۔

مزیدپڑھیں: شمالی کوریا کا ہائپرسونک میزائل کا تجربہ

جاپان کے چیف کیبنٹ سیکرٹری ہیروکازو ماتسونو نے کہا کہ شمالی کوریا کے اقدامات بشمول بار بار بیلسٹک میزائل کا تجربہ ہماری قوم اور خطے کی سلامتی کے لیے خطرہ ہے۔

امریکی فوج کی انڈو پیسیفک کمانڈ نے کہا کہ لانچ سے امریکا یا اس کے اتحادیوں کو کوئی فوری خطرہ نہیں ہے، یہ شمالی کوریا کے غیر قانونی ہتھیاروں کے پروگرام کے غیر مستحکم کرنے والے اثرات کو نمایاں کرتا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔