لاپتا افراد کے لیے سیل بنارہے ہیں جس پر جلد پیش رفت ہوگی، وزیراعلیٰ

ویب ڈیسک  منگل 18 جنوری 2022
حکومت کی تبدیلی کے وقت جو باتیں کی تھیں انہیں پورا کریں گے، بلوچستان اسمبلی میں اظہار خیال (فوٹو : فائل)

حکومت کی تبدیلی کے وقت جو باتیں کی تھیں انہیں پورا کریں گے، بلوچستان اسمبلی میں اظہار خیال (فوٹو : فائل)

 کوئٹہ: وزیراعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو نے کہا ہے کہ مسنگ پرسنز کے حوالے سے ایک سیل بنارہے ہیں اس پر جلد پیش رفت ہوگی، وزیر اعلیٰ بنتے ہوئے عوام سے جو وعدے کیے تھے انہیں پورا کریں گے۔

یہ بات انہوں نے بلوچستان اسمبلی کے اجلاس میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہی۔ بلوچستان اسمبلی کا اجلاس ڈپٹی اسپیکر بابر موسیٰ خیل کی زیر صدارت منعقد ہوا۔ اجلاس کے دوران وقفہ سوالات متعلقہ محکموں کے وزراء کے نہ ہونے پر آئندہ اجلاس کے لیے موخر ہوگیا۔

رکن اسمبلی زابد ریکی نے ناراضی کا اظہار کیا اور کہا کہ جب وزراء نہیں آتے تو اجلاس کیوں بلاتے ہیں؟ اسمبلی پر لاکھوں روپے خرچ کرنے کا کیا فائدہ؟ جواب میں ڈپٹی اسپیکر بابر موسیٰ خیل نے کہا کہ متعلقہ محکموں کے وزراء چھٹی پر ہیں۔

وزیر اعلیٰ عبدالقدوس بزنجو نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی تبدیلی کے وقت جو باتیں کی تھیں انہیں پورا کریں گے، مسنگ پرسنز کے حوالے سے ایک سیل بنارہے ہیں اس پر جلد پیش رفت ہوگی، بارڈر ٹریڈ کو بہتر بنا کر روزگار کے مواقع بڑھائے جائیں گے۔

وزیر اعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو نے کہا کہ وزیر اعلیٰ بنا تو 8سو سے 9سو فائلیں التواء کا شکار تھیں، تندہی کے ساتھ کام کرکے تمام فائلوں کو نمٹایا تاکہ لوگوں کے پھنسے ہوئے کام پورے ہوجائیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ریکوڈک کے معاملے پر بہتر سے بہتر فیصلہ کریں گے عوام کو ہرگز مایوس نہیں کریں گے۔

اجلاس کے دوران مشیر قانون ضیا لانگو سے جیل میں قیدی کی موت پر سوال اٹھایا گیا۔ مشیر قانون ضیا لانگو نے کہا کہ پولیس لاک اپ میں قیدی کی موت کے معاملے پر کمیٹی بنائی ہے، لواحقین اور پولیس کا بیان لیا دونوں میں تضاد ہے، کمیٹی تحقیقات کر رہی ہے اگر محکمے کا کوئی بھی اہلکار یا شخص ملوث ہوا تو اس کے خلاف کارروائی ہوگی۔

اجلاس میں بلوچستان لیٹرز آف ایڈمنسٹریشن اینڈ سکسیشن سرٹیفکیٹس کا مسودہ قانون پیش کیا گیا جسے متعلقہ کمیٹی کے سپرد کردیا گیا۔ بعد ازاں بلوچستان اسمبل کا اجلاس جمعہ 21 جنوری سہ پہر تین بجے تک ملتوی کردیا گیا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔