پنجاب حکومت سے مذاکرات کامیاب، لیڈی ہیلتھ ورکرز نے 30 گھنٹے بعد دھرنا ختم کردیا

ویب ڈیسک  منگل 18 فروری 2014
5 مارچ کو صوبائی اسمبلی میں قرار داد پیش کی جائے جس کی منظوری کے بعد تمام لیڈی ہیلتھ ورکز کو مستقل کردیا جائے گا، خواجہ سلمان فوٹو: ایکسپریس

5 مارچ کو صوبائی اسمبلی میں قرار داد پیش کی جائے جس کی منظوری کے بعد تمام لیڈی ہیلتھ ورکز کو مستقل کردیا جائے گا، خواجہ سلمان فوٹو: ایکسپریس

لاہور: تنخواہوں کی عدم ادائیگی سمیت دیگر مطالبات پر پنجاب حکومت سے مذاکرت کامیاب ہونے پر لیڈی ہیلتھ ورکز نے صوبائی اسمبلی کے سامنے 30 گھنٹے سے جاری دھرنا ختم کردیا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق صوبائی حکومت کی جانب سے لیڈی ہیلتھ ورکز سے مذاکرات کے دوران خواجہ سلمان رفیق کی جانب سے یقین دہانی کروائی گئی کہ 5 مارچ کو صوبائی اسمبلی کے اجلاس میں قرار داد پیش کی جائے جس کی منظوری کے بعد تمام لیڈی ہیلتھ ورکز کو مستقل کردیا جائے گا جس پر تمام خواتین ورکرز کی جانب سے اعتماد کا اظہار کیا گیا اور انہوں نے 30 گھنٹوں سے جاری دھرنا ختم کرنے کا اعلان کردیا۔

اس سے قبل آج صبح صوبائی حکومت کی جانب سے مطالبات منظور کئے جانے کے بعد لیڈی ہلتھ ورکرز کے ایک گروپ نے دھرنا ختم کردیا تھا جبدکہ دوسرے گروپ کی جانب سے تنخواہوں کی ادائیگی اور دیگر مطالبات کے حق میں دیا جانے والا دھرنا بدستور جاری رہا۔ دھرنے میں شریک کئی خواتین نے بھوک ہڑتال بھی شروع کررکھی تھی جس کی وجہ سے بعض خواتین کو طبیعت خراب ہونے پرانہیں اسپتال منتقل کردیا گیا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔