ذیشان قتل کیس؛ زر ضمانت منظور ہونے پر رینجرز اہلکار کو رہا کردیا گیا

ویب ڈیسک  بدھ 5 مارچ 2014
مقتول ذیشان کی بہن تسنیم نے پولیس کے خلاف سیشن کورٹ میں توہین عدالت کی درخواست دائر کردی۔    فوٹو؛ایکسپریس نیوز

مقتول ذیشان کی بہن تسنیم نے پولیس کے خلاف سیشن کورٹ میں توہین عدالت کی درخواست دائر کردی۔ فوٹو؛ایکسپریس نیوز

کراچی: ذیشان قتل کیس میں رینجرز اہلکار رحم نور کو 24 لاکھ روپے کی زر ضمانت منظور ہونے پر رہا کردیا گیا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق رینجرز حکام نے اہلکار رحم نور کی ضمانت کے لئے 24 لاکھ روپے سیشن کورٹ میں جمع کرادیئے جس کے بعد عدالت نے ملزم کی زر ضمانت منظور کرتےہوئے رہائی کا حکم دیا۔ رینجرز اہلکار کی رہائی کے احکامات جیل حکام کو ملنے بعد انہیں سینٹرل جیل سے رہا کردیا گیا۔ دوسری جانب مقتول ذیشان کی بہن تسنیم نے سیشن کورٹ میں توہین عدالت کی درخواست دائر کردی جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ عدالت کے احکامات کے باوجود پولیس رینجرز اہلکار کے خلاف قتل عمد کا مقدمہ درج کرنے کے بجائے ہمیں ہراساں کر رہی ہے لہذا ہمیں انصاف فراہم کیا جائے، عدالت نے توہین عدالت کی درخواست پر پولیس کو نوٹس جاری کردیا۔

واضح رہے کہ ذیشان 28 فروری کو ناگن چورنگی پر رینجرز کی فائرنگ سے جاں بحق ہوگیا تھا۔ جوڈیشل مجسٹریٹ نے گزشتہ روز رحم نور کی ضمانت منظور کرلی تھی تاہم دیت کی رقم 24 لاکھ روپے زر ضمانت کے طور پر عدالت میں جمع کرانے کا حکم دیا تھا زر ضمانت جمع نہ کرانے کے باعث رحم نور کو جیل بھجوادیا گیا تھا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔