برطانوی وزیراعظم کا عہدے سے مستعفیٰ ہونے کا اعلان

ویب ڈیسک  جمعرات 7 جولائ 2022
سینئر وزرا اورمشیروں کے استعفوں کے بعد برطانوی وزیراعظم دباؤ کا شکار ہیں:فوٹو:فائل

سینئر وزرا اورمشیروں کے استعفوں کے بعد برطانوی وزیراعظم دباؤ کا شکار ہیں:فوٹو:فائل

 لندن: برطانیہ کے وزیراعظم بورس جانسن آج کنزرویٹو پارٹی سربراہ کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تاہم پارٹی کے نئے سربراہ کی تقرری تک وہ وزیراعظم کی حیثیت سے ذمہ داری انجام دیتے رہیں گے۔

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق وزیراعظم بورس جانسن نے پارٹی لیڈرشپ سے مستعفیٰ ہونے کا فیصلہ کیا تھا جس کے بعد انہوں نے باضابطہ مستعفیٰ ہونے کا اعلان کیا۔ برطانوی وزیراعظم بورس جانسن موسم خزاں تک وزیراعظم کے فرائض انجام دیں گے۔ اس دوران نئے وزیراعظم کے لئے امیدواروں میں مقابلہ ہوگا۔

برطانوی میڈیا کے مطابق منگل سے اب تک وزیراعظم بورس جانسن کے 50 وزرا اورمشیر ان کی پالیسیوں سے اختلاف کرتے ہوئے استعفی دے چکے ہیں، جس کی وجہ سے ملک میں آئینی اور سیاسی بحران نے جنم دیا، بورس جانسن نے پارٹی سربراہ کی حیثیت سے ارکان کو عہدے نہ چھوڑنے پر منانے کی کوشش کی مگر تمام ہی اراکین نے ساتھ چھوڑنے کا فیصلہ کیا۔

اس سے قبل وزیراعظم بورس جانسن نے بیان میں کہا تھا کہ معاشی دباؤ اوریوکرین جنگ کے باعث پیدا صورتحال کے درمیان ان کا عہدہ چھوڑنے کا کوئی ارادہ نہیں اور وہ ملک کی بہتری اورمفاد کے لئے کام کرتے رہیں گے۔

برطانوی سینیئر وزرا کے ایک گروپ نے سرکاری رہائش گاہ پر وزیرِاعظم سے ملاقات کے دوران انہیں استعفیٰ دینے پر آمادہ کرنے کی کوشش کی تھی تاہم بورس جانسن نے استعفیٰ دینے سے انکار کردیا تھا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔