'PIMEC' پاک بحریہ کی جانب سے پہلے میری ٹائم ایکسپو کا انعقاد

علی باسط  منگل 26 جولائ 2022
بڑی تعداد میں تجارت اور صنعت سے تعلق رکھنے والے لوگ بشمول غیرملکی ماہرین اس میں شریک ہوں گے۔ فوٹو: فائل

بڑی تعداد میں تجارت اور صنعت سے تعلق رکھنے والے لوگ بشمول غیرملکی ماہرین اس میں شریک ہوں گے۔ فوٹو: فائل

میری ٹائم سیکٹر پاکستان کی معیشت میں شہ رگ کی حیثیت رکھتا ہے کیونکہ ہماری 90 فیصد سے زیادہ تجارت سمندر کے ذریعے ہوتی ہے۔

ہمارے پاس میری ٹائم سیکٹر میں خاصی صلاحیت موجود ہے اور ہماری اقتصادی صلاحیت میری ٹائم سیکٹر سے جڑی ہوئی ہے۔ تاہم قومی سطح پر اس حوالے سے مزید آگاہی کی ضرورت ہے۔ ایک اہم اسٹیک ہولڈر ہونے کے ناطے پاک بحریہ ملک بھر میں میری ٹائم کے حوالے سے نئی جہت کو تشکیل دے رہی ہے تاکہ ہماری بلیو اکانومی کی ناقابل استعمال صلاحیت سے فائدہ اٹھانے کے لیے ضروری آگاہی پیدا کی جا سکے۔

بلیو اکانومی کو فروغ دینے کی کوششوں میں تعاون کیلئے پاکستان نیوی وزارت بحری امور کی سرپرستی میں پاک بحریہ کی امن سیریز کے ساتھ “پاکستان انٹرنیشنل میری ٹائم ایکسپو اینڈ کانفرنس” (PIMEC) کی میزبانی کرنے جا رہی ہے۔

بلیو اکانومی اقتصادی ترقی، سماجی شمولیت، اور پائیدار ترقی کو یقینی بناتے ہوئے لوگوں کے معیار زندگی کو بلند کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ اس میں ہائیڈرو کاربن نکالنے کی سمندری صنعتیں، سمندری تہہ کی کان کنی، میرین بائیو ٹیکنالوجی، ماہی گیری اور سمندری سیاحت کے ساتھ ساتھ ابھرتی ہوئی صنعتیں بشمول سمندر کے بیچ قابل تجدید توانائی، جہاز سازی اور جہازوں کی مرمت و آبی زراعت شامل ہیں۔ ساحلی ترقی، جہاز رانی اور بندرگاہ کا بنیادی ڈھانچہ بھی بلیو اکانومی کے تصور میں مضمر ہے۔

عالمی ماہرین اقتصادیات نے بلیو اکانومی کے لیے 24 ٹریلین ڈالر کا تخمینہ لگایا ہے اور اب تک یہ ہر سال 500-600 بلین ڈالر کے درمیان منافع  فراہم کر رہی ہے۔ تاہم بلیو اکانومی کا ایک اہم چیلنج سمندری امور کے بہت سے پہلوؤں کو سمجھنا اور ان کا بہتر انتظام کرنا ہے۔ جس میں ماہی گیری، ماحولیاتی نظام کی بقا اورآلودگی کے تدارک شامل ہیں۔

قدرتی طور پر پاکستان کو 1000 کلومیٹر طویل ساحلی پٹی اور 290,000 مربع کلومیٹر خصوصی اقتصادی زون (EEZ) کے علاوہ کانٹی نینٹل شیلف سے نوازا گیا ہے جو کہ پنجاب اور KPK کے مشترکہ رقبے سے بڑا ہے۔ پاکستان کا میری ٹائم سیکٹر مالی اور تکنیکی لحاظ سے بہت مضبوط ہے اور اسے تعمیر کرنے، چلانے اور  معاشی طور پر منافع بخش بنانے کے لیے خاطر خواہ سرمایہ کاری کی ضرورت ہے۔ اس کی موجودہ سمندری آمدنی کا تخمینہ 183 ملین ڈالر ہے جو کہ ہندوستان اور بنگلہ دیش سمیت ہمارے پڑوسی ممالک سے بہت پیچھے ہے جس کا تخمینہ بالترتیب 5.6 اور 6 بلین ڈالر ہے۔

پاکستان کے ساحلی علاقے حیاتیاتی پیداوار اور حیاتیاتی تنوع سے مالا مال ہیں کیونکہ یہ تجارتی لحاظ سے اہم ماہی گیری بشمول کاربوہائیڈریٹ اور کیکڑے کے لیے وسیع پیمانے پر افزائش گاہیں فراہم کرتے ہیں جن کی سالانہ مالیت 2 بلین ڈالر سے زیادہ ہے۔

تقریباً 40,000 پاکستانی شہری بالواسطہ یا بلاواسطہ ماہی گیری کی صنعت سے منسلک ہیں جو ان وسائل کے استعمال کے لیے ایک بڑی افرادی قوت فراہم کرتے ہیں۔ مچھلی کی برآمد کے وسیع امکانات کے باوجود پاکستان کا ماہی گیری کا شعبہ ملک کی جی ڈی پی میں صرف 0.4 فیصد کا حصہ ڈالتا ہے۔ یہ ایک بار پھر اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ اس دائرے میں بے پناہ صلاحیتوں کے باوجود ہم کتنی کم ترقی کر رہے ہیں اور جس کے نتیجے میں مستقبل میں ہماری ترقی کے امکانات بھی متاثر ہو رہے ہیں۔

پاکستان کی شپ بریکنگ انڈسٹری یعنی گڈانی 1970 کی دہائی میں دنیا کی سب سے بڑی شپ بریکنگ انڈسٹری میں سے ایک تھی لیکن اب یہ بھارت اور بنگلہ دیش کے بعد تیسرے نمبر پر ہے۔ اگر اس صنعت کو دوبارہ بحال کیا جائے اور اس کی پوری صلاحیت کو بروئے کار لایا جائے تو سالانہ جی ڈی پی میں 10 ملین ڈالر سے زیادہ کا حصہ ڈالنے کی صلاحیت ہو سکتی ہے۔ ایک اور سب سے اہم صنعت جو بھرپور استعمال سے منافع بخش ہو سکتی ہے وہ ساحلی سیاحت ہے۔

دنیا بھر کے سیاحوں کو خوبصورت مقامات کی طرف راغب کیا جا رہا ہے خاص طور پر وسیع حیاتیاتی تنوع اور دلکش ساحلوں کے ساتھ سمندری ساحل۔ پاکستان میں ساحلی سیاحت 4 بلین ڈالر کی صلاحیت کے باوجود صرف 0.3 بلین ڈالر کا حصہ ڈالتی ہے۔ پاکستان کی لئے ایک اور مسئلہ ورلڈ اکنامک فورم کی طرف سے شائع کردہ “Travel and Tourism Competetiveness Report” پر ہماری درجہ بندی ہے جس میں پاکستان کو 140 ممالک میں سے 121 ویں نمبر پر رکھا گیا ہے۔بدقسمتی سے پاکستان سفر اور سیاحت میں پورے جنوبی ایشیا میں سب سے کم مسابقتی ملک ہے۔

CPEC نے ہمیں میری ٹائم سیکٹر پر کام شروع کرنے کا موقع فراہم کیا ہے۔ گوادر بندرگاہ کے ارد گرد کی اقتصادیات ایک اہم کردار ادا کرتی ہے اور یہ انتہائی مناسب وقت  ہے کہ ہم بحیثیت قوم اور پالیسی ساز اس پر خصوصی توجہ دیں۔ گوادر صرف ٹرانس شپمنٹ کے ذریعے پاکستان کی معیشت کو تبدیل کرنے میں اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ جہازرانی نقل و حمل کا سب سے سستا ذریعہ ہے۔

آج کل عالمی تجارتی مال کا% 80 حجم سمندر کے ذریعے لے جایا جاتا ہے جس کی مقدار تقریباً 10 بلین ٹن ہے۔ اس میدان میں پاکستان بہت اہم کردار ادا کر سکتا ہے جو اس کی ٹوٹی پھوٹی معیشت کو سنبھالنے میں مدد دے سکتا ہے۔ پاکستان کے لیے حوصلہ افزا پہلو ہائی لائنر شپنگ کنیکٹیویٹی انڈیکس (LSCI) ہے۔ LSCI اس بات کی آگاہی فراہم کرتا ہے کہ دنیا بھر میں بحری جہازوں اور بندرگاہوں کے درمیان رابطہ کتنا اچھا ہے۔

پاکستان 34.06 پوائنٹس پر کھڑا ہے جو کہ ایک صحت مند نمبر ہے اور بنگلہ دیش سے بہتر ہے، حالانکہ بھارت سے پیچھے ہے جو 54 کے قریب ہے۔ چین 151.91 کے انڈیکس کے ساتھ دوڑ میں سب سے آگے ہے۔ پاکستان کو ان مواقع سے فائدہ اٹھانا چاہیے اور اپنی ٹرانس شپمنٹ انڈسٹری کو ترقی دیتے ہوئے اپنے آپریشنز کو بڑھانا چاہیے۔ بحر ہند سے خلیجی ممالک تک پہنچنے کے لیے بحری جہازوں کو اضافی فاصلہ طے کرنا پڑتا ہے، اس لیے گوادر کو مستقبل میں ایک مکمل علاقائی مرکز اور ٹرانس شپمنٹ پورٹ کے طور پر تیار کیے جانے کی صلاحیت موجود ہے۔

دبئی سے گوادر تک جہازوں کی آمدورفت اسے عالمی سطح پر ٹاپ 5 ٹرانس شپمنٹ حب میں شامل کیا جا سکتا ہے۔ UAE ہر سال 21mn TEUs (20 ٹن مساوی یونٹس) ہینڈل کرتا ہے۔ یہ اس موقع کی نشاندہی کرتا ہے جو گوادر کے لئے موجود ہے۔ ٹیکس فری پورٹ ہونے کے ساتھ ساتھ اس بندرگاہ پر زیادہ رش  نہیں ہے۔ مکمل تعمیر کے بعد گوادر منافع کے لیے ان مواقع کا فائدہ اٹھا سکتی ہے۔

مختلف وجوہات کی بناء پر آج تک بلیو اکانومی کی حقیقی صلاحیت سے پوری طرح استفادہ نہیں کیا جا سکا۔ ملک کے بحری شعبے کی ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ سمندر سے متعلق آگاہی کی کمی ہے۔ اس فرق کو مٹانے کیلئے پاکستان نیوی پہلی بار وزارت بحری امور کی سرپرستی میں PIMEC کی میزبانی کرنے جا رہی ہے تاکہ اسٹیک ہولڈرز اور متنوع میری ٹائم صنعتوں کو ایک پلیٹ فارم پر اکٹھا کیا جا سکے اور مشترکہ منصوبوں اور سرمایہ کاری کے مواقع تلاش کیے جا سکیں۔

بڑی تعداد میں تجارت اور صنعت سے تعلق رکھنے والے لوگ بشمول غیرملکی ماہرین اس میں شریک ہوں گے۔ پاکستان میں یہ اپنی نوعیت کا پہلا ایونٹ ہے۔ اس سلسلے میں مختلف بین الاقوامی نمائشوں کا جائزہ لیا گیا اور ان تک رسائی حاصل کی گئی۔ کچھ بڑے بین الاقوامی ایونٹس جن کا تجزیہ کیا گیا ان میں چائنا میری ٹائم اکانومی ایکسپو، میانمار میرین ایکسپو، ایشیا پیسیفک میری ٹائم (سنگاپور) اور یورو میری ٹائم ایکسپو (فرانس) شامل ہیں۔

اس عمل کا آغاز کرتے ہوئے PIMEC سیریز کا سافٹ لانچ 26 جولائی کو اسلام آباد میں ہونے جا رہا ہے اور PIMEC اگلے سال سے پاکستان نیوی کی کثیر القومی مشقوں کی سیریز امن کے ساتھ ہی باقاعدگی سے منعقد کی جائے گی۔ یہ ایونٹ میری ٹائم انڈسٹری کو ایک فورم پر مصنوعات کی نمائش اور اپنے بین الاقوامی حریفوں کے ساتھ براہ راست بات چیت کرنے کے مواقع فراہم کرنے میں مدد کرے گا۔

مزید برآں PIMEC پاکستان کی میری ٹائم اور دفاعی صنعتوں کو بین الاقوامی میری ٹائم اور دفاعی صنعت کاروں کے ساتھ مشترکہ منصوبے قائم کرنے کیلئے تحریک فراہم کرے گا۔ اس سے ملک کی بحری صلاحیت کو مزید اجاگر کیا جائے گا اور ایک سمندر رکھنے والی قوم کے طور پر امن و استحکام کیلئے کردار ادا کرنے کے حوالے سے امیج کو فروغ ملے گا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔