چرچ میں ہندوشرپسندوں کی توڑ پھوڑ کے بعد کشیدگی میں اضافہ

ویب ڈیسک  جمعرات 1 ستمبر 2022
ہندو شرپسندوں کی جانب سے چرچ میں توڑ پھوڑ کی گئی(اسکرین شاٹ)

ہندو شرپسندوں کی جانب سے چرچ میں توڑ پھوڑ کی گئی(اسکرین شاٹ)

بھارتی پنجاب: بھارتی پنجاب کےضلع ترن تارن میں ہندو شرپسندوں کی جانب سے تین منزلہ چرچ اور مذہبی علامتوں کی توڑ پھوڑ کے بعد کشیدگی پھیل گئی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق شرپسندوں نے سیکورٹی گارڈ کو بندوق کی نوک پر یرغمال بنانے کے بعد پادری کی گاڑی کو بھی آگ لگا دی جبکہ ان تمام بہیمانہ کارروائی کے مناظر سی سی ٹی وی میں محفوظ ہو گئے۔

سی سی ٹی وی ویڈیو میں ایک شخص کو ہتھوڑے سے مذہبی علاموں پر بار بار ضربیں لگاتے ہوئے دیکھا جاسکتا ہے۔

مسیحی برادری کی جانب سے اس واقعے کے خلاف ٹھکر پورہ گاوں میں احتجاجی دھرنا دیا جارہا ہے جبکہ احتجاجی مظاہرین  نے مطالبہ کیا ہے کہ  مجرموں کی گرفتاری اور اقلیتی برادری کو تحفظ فراہم کیا جائے۔

اس حوالے سے سیاسی تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ  ہندوتوا کے غنڈے مودی کی زیر قیادت فسطائی بھارتی حکومت کے کہنے پر مذکوہ عمل کر سکتے ہیں تاکہ سکھ برادری کو عیسائی دنیا میں خاص طور پر امریکہ، کینیڈا اور یورپ میں بدنام کیا جا سکے جہاں انہیں خالصتان ریفرنڈم کے لیے اچھی حمایت حاصل ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔