سائبرگ کاکروچ

حمیرا علیم  جمعرات 27 اکتوبر 2022
زلزلہ کے نتیجے میں ٹنوں ملبے کے نیچے پھنس جانے والوں کو تلاش کرنا آسان ہوگیا

زلزلہ کے نتیجے میں ٹنوں ملبے کے نیچے پھنس جانے والوں کو تلاش کرنا آسان ہوگیا

ترقی کی آندھی شاید وہ واحد آندھی ہے کہ جتنی زور سے چلتی ہے اتنی ہی سودمند ہوتی ہے۔انسان پتھر کے دور سے ترقی کرتا مریخ تک جا پہنچا ہے۔

روزانہ سینکڑوں نئی ایجادات انسانی زندگی کو پر آسائش بنا رہی ہیں۔ ایسی ہی ایک ایجاد ہے سائبرگ کاکروچ ۔ اگر خدانخواستہ مستقبل قریب میں کوئی زلزلہ آئے اور زندہ بچ جانے والے ٹنوں ملبے کے نیچے پھنس جائیں تو انھیں تلاش کرنے والے پہلے سائبرگ کاکروچ سکتے ہیں۔

یہ جاپانی محققین کی حالیہ پیش رفت کا ایک ممکنہ اطلاق ہے جس نے کیڑے پر شمسی خلیوں اور الیکٹرانکس کے ’’ بیک پیک ‘‘ کو نصب کرنے اور ریموٹ کنٹرول کے ذریعے ان کی حرکت کو کنٹرول کرنے کی صلاحیت کا مظاہرہ کیا ۔

کینجیرو فوکوڈا اور جاپانی ریسرچ کمپنی ریکن کی تھن فلم ڈیوائس لیبارٹری میں ان کی ٹیم نے ایک لچک دار سولر سیل فلم تیار کی جس کی موٹائی 4 مائیکرون ہے، جو انسانی بالوں کی چوڑائی کی تقریباً 1/25 ہے اور کیڑے کی کمر پر فٹ ہو سکتی ہے۔

فلم روچ کو آزادانہ طور پر حرکت کرنے کی اجازت دیتی ہے جبکہ شمسی خلیہ سگنلز کو پروسیس کرنے اور بھیجنے کے لیے کافی طاقت پیدا کرتا ہے۔

یہ کام سنگاپور کی نانیانگ ٹیکنولوجیکل یونیورسٹی میں حشرات پر قابو پانے کے تجربات پر مبنی ہے اور اس کا نتیجہ ایک دن سائبرگ کیڑوں کی صورت میں نکل سکتا ہے جو روبوٹ کے مقابلے میں زیادہ مؤثر انداز میں علاقوں میں داخل ہو سکتے ہیں۔

فوکوڈا کا کہنا ہے : ’’چھوٹے روبوٹ کے اندر کی بیٹریاں تیزی سے ختم ہو جاتی ہیں، اس لیے تلاش کا وقت کم ہو جاتا ہے۔ ایک اہم فائدہ (سائبرگ کیڑے کا) یہ ہے کہ جب کسی کیڑے کی حرکت کی بات آتی ہے تو کیڑے خود کو حرکت دینے کا سبب بنتا ہے اس لیے زیادہ بجلی درکار نہیں ہے۔‘‘

فوکوڈا اور ان کی ٹیم نے تجربات کے لیے مڈغاسکر میں بسنے والے کاکروچ کا انتخاب کیا کیونکہ وہ سامان لے جانے کے لیے کافی بڑے ہیں اور اس کے کوئی پر نہیں ہیں جو راستے میں آ جائیں۔ جب بیگ اور فلم کو ان کی پیٹھ پر چپکا دیا جاتا ہے،کیڑے چھوٹی رکاوٹوں کو عبور کر سکتے ہیں یا پلٹ جانے پر خود کو ٹھیک کر سکتے ہیں۔

تحقیق کو ابھی بہت طویل سفر طے کرنا ہے۔ ایک حالیہ مظاہرے میں ریکن کے محقق یوجیرو کاکی نے سائبرگ روچ کو بائیں مڑنے کے لیے ایک خصوصی کمپیوٹر اور وائرلیس بلوٹوتھ سگنل کا استعمال کیا جس کی وجہ سے وہ اس عمومی سمت میں مڑگیا۔ لیکن جب ’’ صحیح ‘‘ سگنل دیا گیا تو، بگ حلقوں میں چلنے لگا۔

اگلا چیلنج اجزاء کو چھوٹا کرنا ہے تاکہ کیڑے زیادہ آسانی سے حرکت کر سکیں اور سینسر اور حتیٰ کہ کیمروں کو بھی لگانے کی اجازت دے سکیں۔ کاکی نے کہا کہ اس نے سائبرگ بیگ کو 5,000 ین ($35) مالیت کے پرزوں سے بنایا گیا ہے جو ٹوکیو کے مشہور اکی ہابارا الیکٹرانکس ڈسٹرکٹ میں خریدا گیا تھا۔

بیگ اور فلم کو ہٹایا جا سکتا ہے جس سے روچ لیب کے ٹیریریم میں دوبارہ زندہ ہو جاتے ہیں۔ کیڑے چار ماہ میں پختہ ہو جاتے ہیں اور قید میں پانچ سال تک زندہ رہ سکتا ہے۔ ڈیزاسٹر ریسکیو کیڑے کے علاوہ، فوکوڈا سولر سیل فلم کے لیے وسیع ایپلی کیشنز دیکھتا ہے، جو پلاسٹک ، چاندی اور سونے کی خوردبین پرتوں پر مشتمل ہے۔

اہم علامات کی نگرانی میں استعمال کے لیے فلم کو لباس یا جلد کے کسی حصے میں بنایا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دھوپ والے دن، مواد سے ڈھکا چھتر اتنی بجلی پیدا کر سکتا ہے کہ موبائل فون چارج کیا جا سکتا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔