کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی اڑان رُک گئی

ویب ڈیسک  جمعرات 1 دسمبر 2022
فوٹو: فائل

فوٹو: فائل

 کراچی: ایشین انفرااسٹرکچر ڈیولپمنٹ بینک کے بعد دیگر عالمی مالیاتی اداروں سے فنڈز کی مزید آمد کی توقعات کے باعث جمعرات کو ڈالر کی نسبت روپیہ تگڑا رہا۔

ایکسپریس نیوز کے مطابق  وزیر خزانہ کی حالیہ دورہ کراچی میں گورنر اسٹیٹ بینک سے ملاقات میں ذرمبادلہ بحران سے نمٹنے کے ساتھ معیشت کی بہتری سے متعلق اقدامات پر بروئے لانے پر اتفاق نے مارکیٹ میں یہ امید پیدا ہوئی کہ آنے والے دنوں میں مزید انفلوز متوقع ہیں انہی عوامل کے باعث جمعرات کو ڈالر کی قدر میں واضح تنزلی دیکھی گئی۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ کاروبار کے ابتدائی دورانیے کے دوران انٹربینک میں بڑھتی ہوئی ڈیمانڈ کے سبب ڈالر کی اڑان بھی دیکھی گئی جس سے ایک موقع پر ڈالر کے انٹربینک ریٹ 15 پیسے کے اضافے سے 224.09 روپے کی سطح پر پہنچ گئے تھے لیکن اس دوران اچانک ڈالر نے یوٹرن لے لیا جس کے نتیجے میں کاروبار کے اختتام پر ڈالر کے انٹربینک ریٹ 25 پیسے گھٹ کر 223.69 روپے کی سطح پر بند ہوئے۔

اس کے برعکس اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی قدر بغیر کسی تبدیلی کے 231.50 روپے کی سطح پر بند ہوئی۔

حکومت کی جانب سے عالمی سکوک مارکیٹ میں پاکستان کی ساکھ مستحکم رکھنے کے لیے ایک ارب ڈالر کی یقینی ادائیگیوں کے دعوے کی وجہ سے انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر قابو میں نظر آرہی ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔