ترکی میں اپوزیشن لیڈرکی طمانچے سے تواضع جبکہ لاتیں اورمکے بھی کھانے کو ملے

ویب ڈیسک  منگل 8 اپريل 2014
حملہ آور پارلیمنٹ کے مرکزی دروازے پر کھڑا اپوزیشن لیڈرکے آنے انتظارکررہا تھا، پولیس فوٹو:اے ایف پی

حملہ آور پارلیمنٹ کے مرکزی دروازے پر کھڑا اپوزیشن لیڈرکے آنے انتظارکررہا تھا، پولیس فوٹو:اے ایف پی

استنبول: بھارت میں عام آدمی پارٹی کے سربراہ اروند کیجروال کے بعد ترکی میں بھی اپوزیشن لیڈر  عوام کے غم و غصے سے نہ بچ سکے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق سیکیولر ری پبلکن پیپلزپارٹی کے سربراہ اور اپوزیشن لیڈر کمال کلک داروگلے پارلیمنٹ میں داخل ہوئے ہی تھے کہ ایک نوجوان نے ان پر حملہ کردیا اور چہرے پر زور دار گھونسا مار کر انہیں زخمی کردیا جبکہ حملہ آور نے اس دوران  اپوزیشن لیڈر کی لاتوں اور مکوں سے بھی تواضع کی تاہم  ان کے گارڈ نے  حملہ آور کو پکڑ کو پولیس کے حوالے کردیا۔

پولیس کے مطابق 28 سالہ حملہ آور  پارلیمنٹ کے مرکزی دروازے پر کھڑا  اپوزیشن لیڈرکے آنے انتظارکررہا تھا اور موقع ملتے ہی ملزم نے حملہ کردیا تاہم ملزم نے حملہ کرنے کی کوئی وجہ نہیں بتائی، دوسری جانب وزیراعظم رجب طیب اردوآن نے حملے کی مذمت کرتے ہوئے اسے جمہوری روایات کے خلاف قرار دیا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔