ٹیکسٹائل سیکٹر کے مسائل حل کرینگے، وفاقی وزیر خزانہ

نمائندہ ایکسپریس  جمعـء 16 مئ 2014
مصدقہ بیج وجدیدٹیکنالوجی کے ذریعے کپاس پیداواربڑھائی جا سکتی ہے، رخسانہ شاہ کی بریفنگ۔ فوٹو:  اے ایف پی/ فائل

مصدقہ بیج وجدیدٹیکنالوجی کے ذریعے کپاس پیداواربڑھائی جا سکتی ہے، رخسانہ شاہ کی بریفنگ۔ فوٹو: اے ایف پی/ فائل

اسلام آباد: وفاقی وزیر خزانہ  اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ حکومت پاکستان کو دنیا کی بڑی معاشی قوت بنانا چاہتی ہے جس کیلیے تمام ضروری اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

وہ ٹیکسٹائل انڈسٹری کے مسائل سے متعلق منعقدہ اجلاس کی صدارت کر رہے تھے جس میں وزیر ٹیکسٹائل انڈسٹری عباس آفریدی، وزارت خزانہ اور ٹیکسٹائل انڈسٹری کے اعلیٰ حکام نے بھی شرکت کی۔ وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے سیکریٹری ٹیکسٹائل انڈسٹری کو ہدایت کی گورنر اسٹیٹ بینک، چیئرمین ایف بی آر اور وزارت خزانہ کے حکام کے ساتھ میٹنگ کا انعقاد کیا جائے تاکہ آئندہ بجٹ 2014-15  سے متعلق تجاویز شامل کی جاسکیں۔

انہوں نے کہا کہ ٹیکسٹائل شعبے کو درپیش مسائل کم کرنے کیلیے ہرممکن اقدامات کیے جائیں گے۔ سیکٹری ٹیکسٹائل انڈسٹری رخسانہ شاہ نے ملکی معیشت  میں ٹیکسٹائل شعبے کی اہمیت سے آگاہ کیا۔ اجلاس میں وفاقی وزیر خزانہ کو بتایا گیا کہ مجموعی برآمدات میں ٹیکسٹائل کا حصہ 54 فیصد ہے جبکہ مجموعی قومی پیداوار (جی ڈی پی) میں اس شعبے کا 8 فیصد حصہ ہے، پاکستان زیادہ تر خام مال برآمد کرتا ہے جس کی ویلیو ایڈیشن سے برآمدات کے حجم میں اضافے کیا جا سکتا ہے۔ سیکریٹری ٹیکسٹائل انڈسٹری نے بتایا کہ تصدیق شدہ بیج کی فراہمی اور جدید ٹیکنالوجی کے استعمال کو بڑھا کرکپاس کی فی ہیکٹر پیداوار میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔