یوکرین میں صدارتی انتخابات کا احترام نہ کیا گیا تو خانہ جنگی چھڑ سکتی ہے، روسی صدر

ویب ڈیسک  جمعـء 23 مئ 2014
ماسکو یوکرین کے عوام کی خواہشات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے ، روسی صدر   افوٹو: فائل

ماسکو یوکرین کے عوام کی خواہشات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے ، روسی صدر افوٹو: فائل

ماسکو: روسی صدر ولادی میرپیوٹن کا کہنا ہے کہ 25 مئی کو یوکرین میں ہونے والے صدارتی انتخابات کا احترام کیا جائے بصورت دیگر ملک خانہ جنگی کا شکار ہوسکتا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق  روسی صدر نے یوکرین میں 25 مئی کو ہونے والے صدارتی انتخابات سے قبل اپنے بیان میں کہا ہے کہ روس یوکرین میں قائم ہونے والی نئی حکومت کے ساتھ بہتر تعلقات چاہتا ہے اور اس کامیاب انتخابات کے انعقاد کے لئے ہر کسی کو انتخابات کا احترام کرنا ہوگا. انہوں نے کہا کہ ماسکو یوکرین کے عوام کی خواہشات کو قدر کی نگاہ سے دیکھتا ہے تاہم اگر کسی نے عوامی رائے کو چرانے کی کوشش کی تو ملک  خانہ جنگی اور افراتفری کا شکار ہونے کا خدشہ ہے۔

روسی صدر نے کہا کہ یوکرین میں پیدا ہونے والے بحران کا ذمہ دار امریکا ہے جس نے معزول صدر وکٹر یانوکووچ کو یورپی یونین کے ذریعے ایک معاہدے کے تحت اقتدار سے علیحدہ کیا جبکہ انہوں نے امریکا کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر اس بار ماضی جیسی بغاوت کی کوشش کی گئی یا اس کی حمایت کی گئی  تو خانہ جنگی چھڑنے کے خدشہ کو حقیقت میں بدلتے دیر نہیں لگے گی۔

واضح رہے کہ یوکرین میں 25 مئی کو صدارتی انتخابات ہیں تاہم اس سے قبل روس نواز باغیوں اور فوج کے درمیان چھڑپوں کے نتیجے میں 18 فوجیوں سمیت متعدد افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔