دو صوبے دہشت گردی کی لپیٹ میں ہیں ایسے میں کیا انتخابات ہوسکتے ہیں؟ فضل الرحمان

ویب ڈیسک  منگل 5 دسمبر 2023
فوٹو: فائل

فوٹو: فائل

 اسلام آباد: سربراہ جے یو آئی مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ دو صوبے دہشت گردی کی لپیٹ میں ہیں اس بدامنی کی صورتحال میں کیا انتخابات ہوسکتے ہیں؟

اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ وفاق المدارس کا اجلاس تھا مختلف امور پر بات چیت ہوئی، کل کنونشن سینٹر میں بڑا اجتماع ہوگا مدارس کے نظام میں رکاوٹیں دور ہونی چاہئیں، مدارس کی رجسٹریشن کے لیے قانون ہونا چاہیے۔

فضل الرحمان نے کہا کہ ہم انتخابات میں ہر وقت جانے کے لیے تیار ہیں، انتخابات کے لیے ماحول فراہم کرنا چاہیے، پی ٹی آئی پارٹی نہیں ہے ان کے اجلاس سے پتا چل گیا پی ٹی آئی ایک غبارہ تھا جس میں ہوا ڈالی گئی تھی اور اب پی ٹی آئی کے غبارے سے ہوا نکل گئی ہے، جن لوگوں کی وفاداریاں تبدیل ہورہی ہیں انہیں زبردستی پی ٹی آئی میں لایا گیا تھا جو لوگ پی ٹی آئی میں گئے ہیں وہ خود کہہ رہے تھے ہم مجبور ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دو صوبے اس وقت دہشت گردی کے لپیٹ میں ہیں، ہمارے کارکنان شہید ہورہے ہیں، ڈیرہ اسماعیل خان، ٹانک اور لکی مروت میں پولیس ہے ہی نہیں، اس بدامنی کی صورتحال میں کیا انتخابات ہوسکتے ہیں؟

فضل الرحمان نے کہا کہ ہم نے ن لیگ کے ساتھ مل کر تحریک چلائی ہے، ہم ن لیگ کے ساتھ تعلق برقرار رکھنا چاہتے ہیں اور ان  کے ساتھ سیٹ ایڈجسٹمنٹ کریں گے، وزیراعظم وہی ہوگا جو عوام چاہے گی، ہم اصول کے تابع ہے اور اصول پر چلنا چاہتے ہیں ن لیگ سے اپنے اتحاد کو برقرار رکھیں گے۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ الیکشن کے لیے تیار ہیں مگر ہمیں انتخابی ماحول دیا جائے، لاہور میں تو سب ٹھیک ہے مگر ہماری طرف بھی سب ٹھیک ہو۔

 

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔