ناشتے کی عادت ترک کردینا کینسر جیسے سنگین امراض پیدا کرسکتا ہے

ویب ڈیسک  جمعرات 14 دسمبر 2023
[فائل-فوٹو]

[فائل-فوٹو]

بیجنگ: جو لوگ ناشتہ نہیں کرتے، ان میں ایک عرصہ گزر جانے کے بعد کینسر کا خطرہ ان لوگوں کے مقابلے میں زیادہ ہوجاتا ہے جو ناشتہ باقاعدگی سے کھاتے ہیں۔

چین میں محققین کی جانب سے کیے گئے ایک مطالعے میں اس بات کا انکشاف ہوا کہ روزانہ ناشتہ کرنے والوں کے مقابلے میں وہ لوگ جو ناشتہ نہیں کرتے تھے، ان میں غذائی نالی کے کینسر ، کولوریکٹل کینسر، جگر کے کینسر اور پتتاشی اور بائل ڈکٹ کینسر کا خطرہ زیادہ پایا گیا۔

علاوہ ازیں ناشتہ نہ کرنا گلوکوز میٹابولزم، دائمی سوزش، موٹاپا، دل کی بیماری کا بھی باعث بن سکتا ہے۔ محققین نے 63,000 بالغ افراد کے ناشتے کے معمولات اور معدے  کے کینسر کے خطرے کے درمیان وابستگیوں کا جائزہ لیا جو بنیادی طور پر کینسر کے مریض نہیں تھے۔

دوسری جانب نئی دہلی میں فورٹس اسپتال شالیمار باغ کےماہرِ غذائیت شویتا گپتا کا بھی اس حوالے سے کہنا تھا کہ ناشتہ نہ کرنے سے معدے کے کینسر کا خطرہ بڑھ سکتا ہے کیونکہ یہ گلوکوز میٹابولزم کو متاثر کرتا ہے۔ اسی طرح یہ آکسیڈیشن اور جین مائیکروبیومیشن جیسے عمل کے ذریعے ٹیومر کی ترقی کا سبب بھی بن سکتا ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔