پنجاب؛ زبردستی بھیک منگوانا ناقابل ضمانت جرم قرار، کڑی سزا تجویز

ویب ڈیسک  جمعـء 7 جون 2024
(فوٹو: فائل)

(فوٹو: فائل)

 لاہور: پنجاب میں زبردستی بھیک منگوانا ناقابل ضمانت جرم قرار دے دیا گیا، اس حوالے سے قانون میں مجوزہ ترمیم کابینہ کو ارسال کردی گئی ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر محکمہ داخلہ نے قانون میں ترمیم منظوری کے لیے کابینہ کو ارسال کردی، جس میں قرار دیا گیا ہے کہ بھکاری مافیا کے گینگ لیڈرز کو 10 سال قید کے ساتھ 20 لاکھ جرمانہ بھی ادا کرنا ہوگا اور عدم ادائیگی کی صورت میں مزید 3 سال سزا بھگتنا ہوگی۔

نئے مجوزہ قانون میں زبردستی بھیک منگوانا ناقابل ضمانت جرم قرار دے دیا گیا ہے۔

ترجمان محکمہ داخلہ پنجاب کے مطابق معصوم بچوں، بزرگوں اور خواتین سے زبردستی بھیک منگوانے والے سخت سزا پائیں گے۔ معصوم بچوں کے اعضا ضائع کرنے اور زبردستی بھیک منگوانے والے کسی رعایت کے مستحق نہیں۔ بچوں، بزرگوں اور خواتین سے زبردستی بھیک منگوانا سنگین جرم قرار دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس سے قبل بھکاری مافیا کے گینگ لیڈرز کو سزا دلوانے کے لیے قانون موجود نہیں تھا۔ سنگین جرم میں ملوث مافیا چیفس کا ٹھکانا جیل ہے۔ اس سلسلے میں وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز نے بھکاری مافیا کو لگام ڈالنے کے لیے خصوصی ہدایات جاری کی ہیں۔ محکمہ داخلہ پنجاب معصوم شہریوں پر ظلم کرنے والوں کیخلاف سرگرم عمل ہے۔ محکمہ داخلہ نے قانون میں ترمیم منظوری کے لیے کابینہ کو بھجوا دی ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔