کراچی دہک اٹھا، پارہ 42 ڈگری تک پہنچ گیا

اسٹاف رپورٹر  پير 24 جون 2024
سمندری ہوائیں غیرفعال ہونےاوربلوچستان کی شمال مغربی گرم ومرطوب ہواؤں کے سبب سن 2015 کے ہیٹ ویو جیسی صورتحال رہی

سمندری ہوائیں غیرفعال ہونےاوربلوچستان کی شمال مغربی گرم ومرطوب ہواؤں کے سبب سن 2015 کے ہیٹ ویو جیسی صورتحال رہی

  کراچی: سمندری ہوائیں بند ہونے کے سبب  شہرقائد میں درجہ حرارت 42ڈگری سینٹی گریڈ  تک جا پہنچا،نمی کا تناسب بھی 50 فیصد پررہا جس کی وجہ سے ہیٹ انڈیکس(گرمی کااحساس) 60فیصد ظاہر ہوا،جمعرات سے درجہ حرارت میں کمی متوقع ہے۔

پیرکو شہرمیں انتہائی گرم ومرطوب دن ریکارڈ ہوا،سمندری ہوائیں غیرفعال ہونےاوربلوچستان کی شمال مغربی گرم ومرطوب ہواؤں کے سبب سن 2015 کے ہیٹ ویو جیسی صورتحال رہی۔

محکمہ موسمیات کے مطابق شہرکا زیادہ سےزیادہ درجہ حرارت گذشتہ روزکے مقابلے میں 1.4ڈگری کے اضافے سے42ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ ہوا،دن کے وقت ہوامیں نمی کاتناسب 50فیصد رہا،شہرمیں درجہ حرارت اورنمی میں اضافےکا ہیٹ انڈیکس 60ڈگری رہا۔

محکمہ موسمیات ارلی وارننگ سینٹر کی پیش گوئی کے مطابق شہرمیں اگلے 3روز کے دوران گرم ومرطوب موسم متوقع ہے، چیف میٹرولوجسٹ کراچی سردارسرفرازکے مطابق  بدھ سے شہرمیں جزوی ہیٹ ویو کے اثرات کم ہوناشروع ہوجائیں گے،جس کے بعد موسم صرف گرم ومرطوب رہےگا۔

ان کا کہنا ہے کہ غیرمعمولی گرمی کی وجہ سے گذشتہ دنوں پاکستان کا رخ کرنے والا مغربی سلسلہ ہے،جس کے عقب میں گرم وخشک ہوائیں موجود ہیں،مذکورہ سسٹم کی شمال کی جانب منتقلی کے سبب ہواؤں کی سمت تبدیل ہورہی ہے،جس کے سبب سمندری ہوائیں بند اوربلوچستان کی شمال مغربی ہوائیں شہرکا رخ کررہی ہیں۔

چیف میٹرولوجسٹ کے مطابق اس بات کا امکان ہے کہ جولائی کے پہلے ہفتے میں مون سون بارشوں کا سلسلہ کراچی میں شروع ہوجائےگا، جولائی تا ستمبرمون سون دورانیہ کئی بارشوں کے اسپیلزکا سبب بن سکتا ہے۔

اتوارکودیہی سندھ کے مختلف اضلاع بھی شدید گرمی کی لپیٹ میں رہے،سب سے زیادہ درجہ حرارت جیکب آباد میں 47 ڈگری ریکارڈ ہواجو جون کے مہینے میں معمول کے درجہ حرارت سے2.7ڈگری زیادہ تھا جبکہ شہید بے نظیرآباد اوردادو میں درجہ حرارت 46.5 ڈگری سینٹی گریڈ ریکارڈ ہوا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔