عراق میں داعش کے ٹھکانوں پر امریکی بمباری سے 25 جنگجو ہلاک

اے ایف پی / خبر ایجنسیاں  پير 8 ستمبر 2014
کرکوک میں عراقی فضائیہ کی اسپتال پربمباری، زیر علاج بچوں سمیت7 افراد جاں بحق ہوئے۔ فوٹو: رائٹرز/فائل

کرکوک میں عراقی فضائیہ کی اسپتال پربمباری، زیر علاج بچوں سمیت7 افراد جاں بحق ہوئے۔ فوٹو: رائٹرز/فائل

بغداد / دمشق / واشنگٹن / قاہرہ / انقرہ: امریکی جنگی طیاروں نے شمالی عراق میں ملک کے دوسرے بڑے ڈیم کے قریب بمباری کی جس میں داعش کے 25 جنگجو ہلاک ہوگئے۔

امریکی محکمہ دفاع کے پریس سیکریٹری جان کْربی نے ایک بیان میں کہا کہ یہ حملے اسلامک اسٹیٹ کے دہشت گردوں کی طرف سے حدیثہ ڈیم کو لاحق خطرات کے پیش نظر کیے گئے اوران کا مقصد دہشت گردوں کوانتباہی پیغام دینا ہے۔ امریکاکی جانب سے اس علاقے میں یہ پہلا فضائی حملہ ہے۔ بمباری کے بعد جنگجو بروانا قصبے سے پسپا ہوگئے۔

دریں اثنا شمالی عراقی شہر کرکوک میں عراقی فضائیہ نے ایک اسپتال کو نشانہ بنایا جس میں زیرعلاج بچوں سمیت7 افراد ہلاک جبکہ 22 زخمی ہو گئے۔ صوبہ انبارکے قصبے بروانا میں  جنگجوئوں کے حملے میں صوبہ انبار کے گورنر احمد الدولامی زخمی ہوگئے۔ داعش نے کردقبیلے سے تعلق رکھنے والے اپنے 18 جنگجوؤں کو عدم اعتماد کی بنا پرقتل کر دیا۔

ادھر شام میں بشارالاسد کی حامی سرکاری فوج کے مخالفین کے زیر قبضہ علاقوں میں حملوں میں 106افراد کی ہلاکت کا خدشہ ہے۔ شامی عمومی انقلابی کونسل کے بیان میں کہا گیا ہے کہ فوجی جنگی طیاروں نے ملک کے شمالی علاقہ حلب میں مخالفین کے زیرکنٹرول علاقوں پر بیرل اور ویکیوم بم گرائے جس میں 106 افراد ہلاک ہوگئے۔

امریکی صدر باراک اوباما داعش کے خلاف کارروائی کے حوالے سے بدھ کے روز خطاب کریں گے۔ عرب لیگ کے سربراہ نبیل العرابی نے کہا کہ داعش جنگجوئوں کا مسئلہ فوجی اور سیاسی طریقے سے حل کیا جائے۔ ترکی نے داعش کیخلاف عالمی اتحاد میں شریک ہونے سے انکارکردیا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔