ملائیشین طیارے کو ’’ہائی انرجی چیزوں‘‘ سے نشانا بنایا گیا، تحقیقاتی رپورٹ

ویب ڈیسک  منگل 9 ستمبر 2014
جولائی میں مشرقی یوکرین میں ملائشین ایئر لائن کی پرواز ایم ایچ 17 کو ہوا میں ہی تباہ ہو گیا تھا جس کے نتیجے میں تمام 298 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ فوٹو : فائل

جولائی میں مشرقی یوکرین میں ملائشین ایئر لائن کی پرواز ایم ایچ 17 کو ہوا میں ہی تباہ ہو گیا تھا جس کے نتیجے میں تمام 298 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔ فوٹو : فائل

دی ہیگ: ڈچ سیفٹی بورڈ کی جانب سے جاری ابتدائی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مشرقی یوکرین میں 2 ماہ قبل تباہ ہونے والے ملائیشین ایئرلائن کے طیارے کو ’’ہائی انرجی چیزوں‘‘کی مدد سے نشانا بناکر تباہ کیا گیا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ڈچ سیفٹی بورڈ کی جانب سے جاری ابتدائی تحقیقاتی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مشرقی یوکرین میں تباہ ہونے والے ملائیشین ایئر لائن کی پرواز ایم ایچ 17 کو  ’’ہائی انرجی چیزوں‘‘کی مدد سے نشانا بنایا گیا جس کی وجہ سے جہاز ہوا میں ہی ٹکڑے ٹکڑے ہو کر تباہ ہو گیا۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ طیارے کی تباہی ممکنہ طور پر میزائل لگنے کی وجہ سے ہوئی تاہم جب تک اس بات کے ثبوت نہیں مل جاتے تو ہم کسی حتمی نتیجے پر نہیں پہنچ سکتے۔

واضح رہے کہ رواں برس جولائی میں مشرقی یوکرین میں ملائیشین ایئر لائن کی پرواز ایم ایچ 17  دوران پرواز ہوا میں ہی تباہ ہو گئی تھی جس کے نتیجے میں جہاز میں سوارتمام 298 افراد ہلاک ہو گئے تھے جب کہ  ہلاک ہونے والوں میں سے زیادہ تعداد ہالینڈ کے شہریوں کی تھی،مغربی ممالک کی جانب سے طیارے کی تباہی کا ذمہ دار یوکرین میں روس نواز علیحدگی پسندوں کو ٹھہرایا گیا تھا جب کہ روس نواز علیحدگی پسندوں کی جانب سے طیارے کو تباہ کرنے کی سختی سے تردید کی گئی۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔