آؤ پڑھاؤ؛ ایکسپریس میڈیا کے تحت اقرا یونیورسٹی میں پروگرام

اسٹاف رپورٹر  جمعـء 26 دسمبر 2014
کراچی: اقرا یونیورسٹی میں ’’ آؤپڑھائو مہم‘‘ کے سلسلے میں منعقدہ تقریب میں کیک کاٹا جا رہا ہے۔ فوٹو: ایکسپریس

کراچی: اقرا یونیورسٹی میں ’’ آؤپڑھائو مہم‘‘ کے سلسلے میں منعقدہ تقریب میں کیک کاٹا جا رہا ہے۔ فوٹو: ایکسپریس

کراچی: ’’ایکسپریس‘‘ میڈیا گروپ کے تحت ملک کے بچوں کے مستقبل کو سنوارنے اوراساتذہ کی خدمات کے اعتراف میں شروع کی گئی مہم ’’جو سیکھا ہے وہ سب کو سکھاؤ، آؤ پڑھاؤ‘‘ کے سلسلے میں اقراء یونیورسٹی سٹی کیمپس میں پروگرام کاانعقاد کیا گیا۔

پروگرام سے ایکسپریس ٹریبیون سے وابستہ سینئرصحافی ابو الحسنات کے علاوہ اقرا یونیورسٹی سٹی کیمپس کے استاد احسن درانی اور ڈائریکٹر آف اکیڈمکس سلمان عباسی نے شعبہ تعلیم میں اساتذہ کی خدمات، ذمے داریوں اوراپنے تجربات سے سامعین کو آگاہ کیاجبکہ پروگرام میں موجود اقرا یونیورسٹی کے اساتذہ کو آؤ پڑھاؤ مہم کے تحت تعریفی اسناد اور شیلڈزپیش کی گئیں۔

پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے سینئرصحافی ابوالحسنات کاکہناتھاکہ تعلیم کاپیشہ ہمارامستقبل ہے اور ایکسپریس میڈیا گروپ نے اس پیشے کی اہمیت اورحساسیت کو سمجھتے ہوئے اساتذہ اورطلبہ کوان کی ذمے داریوں کی جانب توجہ مبذول کرانے کا بیڑہ اٹھایا کیونکہ میڈیا سماجی تبدیلی کاایک اہم ذریعہ ہے،ریاست نے تعلیم کے شعبے میں اپنی ذمے داریاں ادانہیں کیں اس لیے نجی شعبہ اس سلسلے میں آگے آیا،ہمارے کلچرسسٹم میں اساتذہ کواس طرح اہمیت نہیں دی جاتی جس کے وہ مستحق ہیں تاہم امید کی جاتی ہے کہ ایکسپریس میڈیا گروپ کے تحت شروع کی گئی اس مہم کے ذریعے نہ صرف اساتذہ آگے بڑھ کراس ذمے داری کا احساس کریں گے بلکہ اس پیشے کی اہمیت بھی اجاگر ہوگی۔

اس موقع پرخطاب میں اپنی زندگی کے تجربات سے آگاہ کرتے ہوئے اقرایونیورسٹی کے سینئراستاد احسن درانی نے طلبہ سے کہا کہ طلبہ تدریس کے شعبے کی جانب ضرورآئیں تاہم وہ تدریس کے آغازسے قبل کارپوریٹ سیکٹر کا تجربہ ضرور حاصل کریں تاکہ ان کی تعلیم کی عملی زندگی میں کیااہمیت ہے اس کا ادارک بھی ہوسکے۔

انھوں نے طلبہ سے کہاکہ وہ رضاکارانہ طور پر اپنے محلے کے سرکاری اسکولوں میں جاکر پڑھائیں، یونیورسٹی کی سطح پربھی تدریس کے شعبے میں آئیں تاہم اس سے قبل اسکولوں میں رضاکارانہ طورپراپنی خدمات ضرور دیں تاکہ جوکچھ انھوں نے سیکھاہے اسے قوم کے بچوں کومنتقل کرسکیں۔احسن درانی نے بتایاکہ انھوں نے کینڈاکی ایک یونیورسٹی سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی اوراس دوران انھوں نے تعلیم کے ساتھ ساتھ ملازمت بھی کی اورملک واپس آکربیک وقت تدریس اورکارپوریٹ سیکٹردونوں میں اپنی خدمات دیں۔

اقرا یونیورسٹی کے ڈائریکٹراکیڈمکس سلمان عباسی نے کہاکہ ہم اساتذہ ہونے کے باوجودروزانہ کی بنیادوں پر کچھ نہ کچھ سیکھتے ہیں اوربعض اوقات سیکھنے کایہ موقع طلباہی سے ملتا ہے، ہمارے اداروں میں دوطرح کے لوگ ہوتے ہیں،ایک وہ جو محض اپنی ذ مے داریاں اداکرتے ہیں اوراضافی اموریاذمے داریوں سے الگ رہتے ہیں تاہم ایک دوسرے طرح کے افراد اپنی پیشہ ورانہ استعداد بڑھانے کے لیے اضافی ذمے داریاں بھی نبھاتے ہیں،ایسے لوگ کامیابیوں سے ہمکنار ہوتے ہیں۔

تقریب کے اختتام پر ایکسپریس ٹریبیون سے وابستہ سینئرصحافی ابوالحسنات نے اقراریونیورسٹی کے اساتذہ اقبال نایانی، فراز احمد ،مرزاامین،احسن درانی، حماد الرحمٰن، ثمین عالم ،تحسین اقبال،مفرہ ملک اور ڈائریکٹر آف اکیڈمکس سلمان عباسی کو آؤ پڑھاؤ مہم کی تعریفی اسناد پیش کیں۔پروگرام میں نظامت کے فرائض کومل علی اورسفیان محمود نے ادا کیے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔