پاک افغان سرحد پر 470 کلومیٹر طویل خندق کی کھدائی مکمل

آئی این پی  ہفتہ 3 جنوری 2015
غیرقانونی راستے بند، 8 فٹ گہری 10 فٹ چوڑی خندق کی کھدائی پر260 ملین روپے لاگت آئی۔ فوٹو: آئی این پی

غیرقانونی راستے بند، 8 فٹ گہری 10 فٹ چوڑی خندق کی کھدائی پر260 ملین روپے لاگت آئی۔ فوٹو: آئی این پی

چمن: پاک افغان سرحد پرغیرقانونی راستوں کوبند کرنے کے لیے ایک سال قبل شروع  کی گئی 470کلومیٹر طویل 8 فٹ گہری اور 10 فٹ چوڑی خندق کی کھدائی مکمل کرلی گئی۔

ایف سی ذرائع کے مطابق خندق کھودنے پر260 ملین  روپے کی لاگت آئی ہے۔ ایف سی کی زیر نگرانی  خندق کی کھدائی کا  کام بھاری مشینری کے ذریعے مکمل کیا گیا جبکہ خندق کی کھدائی سے حاصل مٹی کے بند بنانے سے اب پاکستان اور افغانستان کے درمیان سرحدی حدود واضح ہوگئی ہیں۔

جمعے کو ایف سی بلوچستان کے ترجمان نے بتایا کہ پاک افغان سرحد پرخندق ان علاقوں میں کھودی گئی جہاں سے سرحد کے دونوں طرف دراندازی ہوتی تھی، اکثر اوقات میں ایف سی اور شرپسند عناصر کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ اور جھڑپیں ہوتی رہتی تھیں اور پاک افغانستان پر ایف سی سیکڑوں چیک پوسٹیں موجود ھونے کے ساتھ ساتھ دن رات ایف سی کی جانب سے گاڑیوں اور دشوار گزاراور پہاڑی علاقوں میں پیدل گشت بھی جاری رہتا ہے۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ بلوچستان کی افغانستان اور ایران کے ساتھ 1100 کلو میٹر سے زائد طویل سرحد ہے ۔ایف سی حکام کے مطابق پاک افغان سرحد چمن پر باب دوستی بلوچستان میں افغانستان کے ساتھ مین کراسنگ پوائنٹ ہے جہاں سے آمدورفت کرنے والے افراد کی مکمل چیکنگ کی جاتی ہے۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔