قطر اسپتال کے دورے کے دوران وزیراعلیٰ سندھ کی زبان کئی بار لڑکھڑا گئی

ویب ڈیسک  پير 29 جون 2015
قطر اسپتال کے دورے کے دوران قائم علی شاہ نےکراچی کی آبادی 20 لاکھ بتائی اور پھر 20 کروڑبتاڈالی،   فوٹو: فائل

قطر اسپتال کے دورے کے دوران قائم علی شاہ نےکراچی کی آبادی 20 لاکھ بتائی اور پھر 20 کروڑبتاڈالی، فوٹو: فائل

 کراچی: اسمبلی اجلاسوں کے دوران نیند پوری کرنے کی بات ہو یا چلتے پھرتے لڑکھڑانے کے واقعات ہمارے ذہنوں میں فوراً وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کا نام آتا ہے جب کہ اس بار قائم علی شاہ کا تو شاید گرمی سے دماغ ہی چکرا گیا اور وہ حکومتی اعدادو شمار بھی غلط بیان کرتے رہے۔

کراچی میں قطر اسپتال کے دورے کے دوران میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ کی زبان کئی بار لڑکھڑائی اور پیچھے کھڑے وزرا انہیں بار بار لقمے دے کر ان کی تصحیح کرتے رہے۔

وزیراعلیٰ سندھ کا کہنا تھا کہ قطر اسپتال میں کوئی ہلاکت نہیں ہوئی جب کہ اسپتال کے اعدادوشمار کے مطابق قطر اسپتال میں ہیٹ اسٹروک سے 45 افراد جاں بحق ہوئے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہیٹ اسٹروک کے باعث شہر کے مختلف اسپتالوں میں 1100 افراد کو طبی سہولیات فراہم کی گئیں، پیچھے کھڑے وزیر صحت جام مہتاب ڈہر نے فوراً ٹوکا اور بتایا کہ 11 ہزار کے قریب افراد کو طبی سہولیات فراہم کی گئیں۔

قائم علی شاہ کے کیا کہنے کہ انھوں نے پہلے کراچی کی آبادی 20 لاکھ بتائی اور پھر 20 کروڑ، تیسری بار اللہ اللہ کر کے کراچی کی صحیح آبادی سائیں سرکار کی زبان پر آہی گئی اور انھوں نے شہر کی صحیح آبادی 2 کروڑ بتائی۔ بات صرف یہیں تک محدود نہیں بلکہ ایک جگہ تو قائم علی شاہ نے غریب کو مریض کہہ ڈالا اور پھر خود ہی تصحیح کرتے نظر آئے۔

یہ تو کمالات تھے وزیراعلیٰ سندھ کے لیکن قائم علی شاہ کی طرح ان کی سندھ سرکار بھی ان سے کسی صورت پیچھے نہیں۔ حکومت سندھ کی جانب سے گرمی سے بچاؤ کے لئے نماز استسقاء پڑھنے کے لئے ایک پریس ریلیز جاری کی گئی جس میں نماز استسقاء کی جگہ ’نماز استثناء‘ کا لفط لکھ دیا۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔