پاکستان کی 52 فیصد آبادی ہائی بلڈ پریشر میں مبتلا ہے، سروے

ویب ڈیسک  منگل 3 جنوری 2017
پاکستان کی 52 فیصد آبادی ہائپر ٹینشن کا شکار ہے جس کا بڑا حصہ صوبہ پنجاب اور سندھ سے تعلق رکھتا ہے، رپورٹ، فوٹو؛ فائل

پاکستان کی 52 فیصد آبادی ہائپر ٹینشن کا شکار ہے جس کا بڑا حصہ صوبہ پنجاب اور سندھ سے تعلق رکھتا ہے، رپورٹ، فوٹو؛ فائل

اسلام آباد: ملک میں عوامی صحت سے متعلق کیے گئے ایک سروے سے معلوم ہوا ہے کہ پاکستان کی 52 فیصد آبادی ہائپر ٹینشن یعنی ہائی بلڈ پریشر کا شکار ہے جس کا بڑا حصہ صوبہ پنجاب اور سندھ سے تعلق رکھتا ہے۔

سروے میں یہ بھی انکشاف کیا گیا ہے کہ ہائی بلڈ پریشر میں مبتلا 42.2 فیصد لوگوں کو معلوم ہی نہیں کہ انہیں یہ عارضہ لاحق ہے اور وہ اسے عام دردِ سر سمجھتے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق صرف 10 فیصد پاکستانی ایسے ہیں جنہیں یہ تو معلوم ہے کہ انہیں ہائی بلڈ پریشر ہے لیکن ان میں سے بھی 42 فیصد کوئی دوا نہیں لیتے۔

سروے میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مختلف بیماریوں کے اسباب میں تمباکو نوشی کا کردار 20 فیصد ہے جب کہ 46 فیصد کی وجہ کسی قسم کی جسمانی ورزش نہ کرنا ہے۔ علاوہ ازیں اسی سروے میں یہ انکشاف بھی کیا گیا ہے کہ پاکستان میں ہر سال تقریباً 8 ہزار بچے کینسر میں مبتلا ہورہے ہیں۔

واضح رہے کہ ہائپر ٹینشن/ ہائی بلڈ پریشر کو دل کی بیماریوں سمیت درجنوں امراض کی جڑ قرار دیا جاتا ہے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔