ٹرمپ کا ایجنسیوں کو ایران سے ایٹمی معاہدے پر نظرثانی کا حکم

خبر ایجنسیاں  جمعـء 21 اپريل 2017
واشنگٹن ایٹمی معاہدے سے متعلق اپنی ذمے داریاں پوری کرے،ایرانی وزیرخارجہ ظریف۔ فوٹو: فائل

واشنگٹن ایٹمی معاہدے سے متعلق اپنی ذمے داریاں پوری کرے،ایرانی وزیرخارجہ ظریف۔ فوٹو: فائل

واشنگٹن / تہران:  امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایجنسیوں کو ایران کے متنازع جوہری پروگرام پر طے پائے جانیوالے سمجھوتے پر نظر ثانی کا حکم دیا ہے اور کہا ہے کہ یہ ثابت کیا جائے کہ آیا ایران کے ساتھ معاہدہ اور تہران پر پابندیوں کا خاتمہ امریکا کے مفاد میں ہے یا نہیں۔

امریکی صدر کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ صدر ٹرمپ نے ایک محتاط قدم اٹھاتے ہوئے خفیہ ایجنسیوں کو ہدایت کی ہے کہ وہ 90 دن کے اندر اندر ایران کے جوہری پروگرام پر معاہدے کے بارے میں رپورٹ پیش کریں کہ آیا یہ معاہدہ اور اس کے نتیجے میں ایران پر اقتصادی پابندیوں میں نرمی سے امریکا کی قومی سلامتی کو نقصان تو نہیں پہنچ رہا ہے۔

صحافیوں کی جانب سے صدارتی ترجمان شان اسپائسر سے پوچھا گیا کہ کیا صدر ٹرمپ یہ سمجھتے ہیں کہ ایران نے جوہری معاہدے کی شرائط کی پابندی نہیں کی تو ان کا کہنا تھا کہ صدر ٹرمپ محتاط انداز میں اقدامات کررہے ہیں۔

ایرانی وزیر دفاع حسین دھقان نے کہا کہ دہشت گرد امریکی ہتھیاروں سے دنیا بھر میں بدامنی پھیلا رہے ہیں، ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے کہا کہ ایٹمی معاہدے سے متعلق امریکا اپنی ذمے داریاں پوری کرے۔



ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔