آئی جی سندھ کو ہٹانے کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ

ویب ڈیسک  منگل 30 مئ 2017
وفاق آئی جی کی تقرری کے لئے صوبے سے مشاورت کا پابند ہے، درخواست گزار کا موقف فوٹو: فائل

وفاق آئی جی کی تقرری کے لئے صوبے سے مشاورت کا پابند ہے، درخواست گزار کا موقف فوٹو: فائل

 کراچی: سندھ ہائی کورٹ نے آئی جی سندھ اللہ ڈنو خواجہ کو ہٹانے کے خلاف درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

سندھ ہائی کورٹ کے دو رکنی بنچ کے روبرو آئی جی سندھ کو ہٹانے کے خلاف درخواست کی سماعت ہوئی۔ درخواست گزار بیرسٹر فیصل صدیقی نے کہا کہ ایڈووکیٹ جنرل کا یہ کہنا غلط ہے کہ آئی جی کی مدت ملازمت مقرر نہیں، وفاق آئی جی کی تقرری کے لئے صوبے سے مشاورت کا پابند ہے، تقرری کا اختیار وفاق کا ہی ہے۔ صوبے نےخود وفاق کو اے ڈی خواجہ کی خدمات کی واپسی اور نئے آئی جی کی تقرری کی درخواست کی۔

عدالت عالیہ نے فریقین کے دلائل مکمل ہونے کےبعد فیصلہ محفوظ کرتے ہوئے فیصلہ آنے تک آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کو کام جاری رکھنے کا حکم دیا ہے۔

واضح رہے کہ سندھ حکومت نے چند ماہ قبل آئی جی سندھ کو عہدے سے ہٹادیا تھا لیکن انہیں ہٹائے جانے کے خلاف سندھ ہائی کورٹ میں درخواست دائر کردی گئی تھی۔ اس قانونی جنگ کے دوران اے ڈی خواجہ نے بھی سندھ حکومت سے چپقلش کا اعتراف کرتے ہوئے عہدہ چھوڑنے کی خواہش ظاہر کی تھی۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔