وہاڑی میں پنچایت کے حکم پر 20 سالہ لڑکی کا جبری نکاح 60 سالہ شخص سے کرا دیا گیا

نامہ نگار  منگل 8 اگست 2017
پنچایت نے لڑکے کی بہن نسرین کا نکاح لڑکی کے 60 سالہ والد ذوالفقار سے کرا دیا، متاثرہ لڑکی نے خودکشی کی دھمکی دیدی۔ فوٹو:فائل

پنچایت نے لڑکے کی بہن نسرین کا نکاح لڑکی کے 60 سالہ والد ذوالفقار سے کرا دیا، متاثرہ لڑکی نے خودکشی کی دھمکی دیدی۔ فوٹو:فائل

وہاڑی:  پنچایت نے لومیرج کے بدلے لڑکے کی 20 سالہ بہن کا نکاح لڑکی کے 60 سالہ والد سے پڑھا دیا۔ 

نواحی چک 74 ڈبلیو بی کے محنت کش محمد نواز کے بیٹے محمد صابر نے گزشتہ ماہ زمیندار ذوالفقار ہنجرا کی18 سالہ بیٹی نگینہ کو بھگا کر پسند کی شادی کر لی، علم ہونے پر محمد نواز بیوی بیٹیوں کو لے کر روپوش ہو گیا جبکہ زمیندار نے صابر کے بھائی، بہن، ماموں سمیت 8 افراد کے خلاف اغوا کا مقدمہ درج کرا دیا تاہم بعد ازاں اس سلسلے میں پنچایت ہوئی جس نے صابرکی20 سالہ بہن کا نکاح 60 سالہ زمیندار ذوالفقار سے پڑھا دیا جبکہ 20 اگست کو رخصتی کی تاریخ مقرر کر دی۔

گزشتہ روز متاثرہ نسرین نے والدہ نوراں بی بی، بھائی وسیم شہزاد اور وکیل شیخ فضل الرحمن کے ہمراہ صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ پنچایت نے مسئلہ حل کرنے کے بہانے انھیں بلایا اور زبردستی نکاح نامہ پر انگوٹھے لگوا دیئے نسرین نے کہا کہ اگر اسے انصاف نہ ملا تو وہ خودکشی کر لے گی جس کی ذمہ داری حکام پر ہو گی۔

ایکسپریس میڈیا گروپ اور اس کی پالیسی کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں۔